یوکرین پر قبضہ کے بعد اگلی باری یورپی ممالک کی ہو گی، ولادیمیر زیلنسکی نے خبردار کر دیا

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی، جن کا ملک ہمسایہ ملک روس کی طرف سے بڑے پیمانے پر بلا اشتعال حملے کا سامنا کر رہا ہے، نے یورپی یونین سے مطالبہ کیا ہے کہ یوکرین کو فوری طور پر جنگ سے روکا جائے۔

یوکرین کے صدر نے مزید خبردار کیا کہ اگر یوکرین پر قبضہ ہو گیا تو روس کا اگلا ٹارگٹ یورپی ممالک ہوں گے۔

ولادیمیر زیلنسکی نے 28 فروری کو یورپی یونین سے ایک نئے خصوصی طریقہ کار کے ذریعے یوکرین کے فوری الحاق کے لیے اپیل کی۔ 

انہوں نے سوشل میڈیا پر شیئر کی گئی ایک ویڈیو تقریر میں کہا کہ ہمارا مقصد تمام یورپیوں کے ساتھ رہنا ہے اور سب سے اہم بات، برابر ہونا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ یہ منصفانہ ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ہم اس کے مستحق ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یورپی اس بات کا مشاہدہ کر رہے ہیں کہ ہمارے فوجی نہ صرف ہمارے ملک کے لیے بلکہ پورے یورپ کے لیے، امن کے لیے، سب کے لیے اور یورپی یونین کے تمام ممالک کے لیے لڑ رہے ہیں۔

یوکرینیوں نے دنیا کو دکھا دیا ہے کہ ہم کون ہیں، جب کہ روس نے اپنا خوفناک چہرہ بھی دکھایا ہے۔ ہر جرم، قابض کی ہر گولہ باری ہمیں مزید متحد کرتی ہے۔

 بلاک کے عہدیداروں نے متعدد وجوہات کی بناء پر ایسے کسی اقدام کے امکان کو فوری طور پر کم کر دیا، بشمول یہ حقیقت کہ اس طرح کا کوئی تیز ترین طریقہ کار موجود نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں | دھمکی آمیز خط پر روس کی وزارت خارجہ کا رد عمل آ گیا  

جرمن وزیر خارجہ اینالینا بیربوک نے کہا کہ 27 ملکی گروپ میں شامل ہونا کوئی ایسی چیز نہیں ہے جو ایک دو ماہ میں ہو جائے لیکن یوکرین ’یورپ کے گھر‘ کا حصہ ہے جس میں اس کا خیرمقدم ہے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ یوکرین کا الحاق اس بات کا اشارہ نہیں دے گا کہ یورپی یونین اسے روس سے الگ کرنا چاہتی ہے بلکہ یوکرین کے بہت سے شہریوں کی شمولیت کی خواہش کو پورا کرنے کی خواہش کی عکاسی کرے گی۔ 

ممکنہ اراکین کو عام طور پر کئی پالیسی شعبوں میں گہری بیٹھی ہوئی اصلاحات کے ذریعے یورپی یونین کے معیارات تک پہنچنے کے طویل اور پیچیدہ عمل سے گزرنے میں برسوں لگتے ہیں۔

 ان اصلاحات کے ساتھ اکثر اقتصادی اور مالیاتی تبدیلیوں کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ یہ ظاہر کیا جا سکے کہ کوئی ملک یورپی یونین میں مقابلہ کرنے اور بالآخر یورو کو اپنانے کے لیے کافی مضبوط ہے۔ 

 یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بوریل نے کہا کہ رکنیت کے لیے بہت سال” لگ سکتے ہیں۔

 آٹھ مشرقی یورپی ممالک — بلغاریہ، جمہوریہ چیک، ایسٹونیا، لٹویا، لتھوانیا، پولینڈ، سلوواکیہ اور سلووینیا — کے صدور نے 28 فروری کو ایک خط پر دستخط کیے جس میں کہا گیا تھا کہ یوکرین فوری طور پر یورپی یونین میں شمولیت کے تناظر کا مستحق ہے۔

انہوں نے یورپی یونین کے اراکین پر زور دیا کہ وہ بلاک کے اداروں کو اس قابل بنائیں کہ وہ یوکرین کو یورپی یونین کے امیدوار ملک کے طور پر درجہ دینے اور الحاق کی بات چیت کا عمل شروع کرنے کے لیے اقدامات کریں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں