یوکرین مذاکرات کے لئے تیار، روس کا نیوکلر الرٹ جاری

یوکرین نے اتوار کے روز کہا ہے کہ اس نے چار دن کے تنازعے کے بعد روس کے ساتھ مذاکرات پر اتفاق کیا ہے کیونکہ روسی صدر ولادیمیر پوتن نے اپنے دفاعی سربراہوں کو حکم دیا ہے کہ وہ نیوکلر “ڈیٹرنس فورسز” کو الرٹ رکھیں۔ 

اس جنگ میں پہلے ہی درجنوں شہری ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ سیکڑوں ہزاروں نقل مکانی پر مجبور ہو چکے ہیں اور ماسکو کو ایک عالمی پاریہ میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ 

صدر ولادیمیر زیلنسکی کے دفتر نے کہا کہ یوکرین کا ایک وفد بیلاروس کی سرحد پر روسی سے ملاقات کرے گا جس نے روسی فوجیوں کو یوکرین پر حملہ کرنے کی اجازت دی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | پیپلرز پارٹی کا حکومت مخالف لانگ مارچ شروع ہو گیا  

یہ ملاقات چرنوبل کے قریب ہونے والی ہے جو دنیا کی بدترین جوہری تباہی کا مقام ہے۔ 

 زیلنسکی کے دفتر نے اپنے بیلاروسی ہم منصب الیگزینڈر لوکاشینکو سے بات کرنے کے بعد ایک بیان میں کہا کہ سیاستدانوں نے اس بات پر اتفاق کیا کہ یوکرین کا وفد بغیر کسی شرط کے روسی سے ملاقات کرے گا۔

 یوکرین کی افواج نے پہلے کہا تھا کہ انہوں نے روس کے حملے کے چوتھے دن یوکرین کے دوسرے سب سے بڑے شہر خارکیف میں روسی دراندازی کا مقابلہ کیا تھا۔ 

  مغربی ممالک کی جانب سے یوکرین کو ہتھیار دینے اور پہلے سے زیادہ سخت پابندیاں عائد کرنے کے کے بعد صدر پوتن نے اپنے دفاعی سربراہوں کو حکم دیا کہ وہ ملک کی جوہری “ڈیٹرنس فورسز” کو ہائی الرٹ پر رکھیں۔ 

 انہوں نے مغربی ممالک پر اپنے ملک کے خلاف “غیر دوستانہ” اقدامات کرنے کا الزام بھی لگایا۔

 یوکرین میں حملے شروع ہونے کے بعد سے اب تک تین بچوں سمیت 198 شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔ 

 اقوام متحدہ نے شہریوں کی تعداد 64 بتائی ہے۔ 

زیلنسکی نے کہا کہ یوکرین میں گزشتہ رات سفاکیت ہوئی تھی۔ وہ سب کے خلاف لڑتے ہیں۔ وہ تمام جانداروں کے خلاف لڑتے ہیں۔ کنڈرگارٹن کے خلاف، رہائشی عمارتوں کے خلاف اور یہاں تک کہ ایمبولینسوں کے خلاف۔ 

 اس دوران کئی یورپی ممالک نے اتوار کو روسی ایئر لائنز پر اپنی فضائی حدود سے گزرنے پر پابندی لگا دی اور کئی نے یوکرین کے لیے ہتھیار دینے کا وعدہ کیا لیکن واضح کیا کہ وہ فوجی مداخلت نہیں کریں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔