ہیکرز نے چالیس ہزار کراچی رہائشیوں کے نام اور ایڈریس لیک کر دئیے

سائبرسیکیوریٹی کی خلاف ورزیاں بہت عام

دنیا بھر میں سائبرسیکیوریٹی کی خلاف ورزیاں بہت عام ہیں۔ ایک حالیہ واقعے میں ایک ہیکر نے کراچی کے 42,064 افراد کا ذاتی ڈیٹا ایک ریٹیل ویب سائٹ کے ذریعے لیک کر دیا ہے۔ اس ڈیٹا میں مکمل نام، فون نمبر، رہائشی پتے، رسید کی تفصیلات اور بہت کچھ شامل ہے۔ 

 یہ ذاتی ڈیٹا فی الحال ڈیپ ویب پر ایک فورم پر فروخت کے لیے تیار ہے۔ یہ معلومات انٹیلی جنس تجزیہ کار ذکی خالد نے ٹوئٹر پر بتائی۔

 ہیکر نے اپنی فروخت کی پیشکش کے ساتھ اسکرین شاٹ کے ساتھ لیک ہونے والے ذاتی ڈیٹا کا نمونہ دکھایا ہے۔ 

کمپنی کے انوائس کی تفصیلات

نمونہ کسی گاہک کے لیے کمپنی کے انوائس کی تفصیلات کی اندرونی کاپی دکھاتا ہے۔ یہ لیک ڈیٹا گاہک کا نام، رہائشی پتہ، ای میل پتہ، فون نمبر، اور بہت کچھ بھی دکھاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد اور کراچی میں ڈینگی کیسز میں اضافہ

یہ بھی پڑھیں | سیلاب سے مالاکنڈ کے پاورہاؤس متاثر

 رپورٹ کے مطابق، یہ واضح نہیں ہے کہ اس ڈیٹا کی خلاف ورزی میں صارفین کے کس طبقے کو نشانہ بنایا گیا تھا۔ نمونے کے اعداد و شمار ڈی ایچ اے فیز 2 سے کسی ایک گاہک کی معلومات کو ظاہر کرتا ہے، لیکن یہ بہت ممکن ہے کہ خوردہ فروشوں کو صارفین کی طرح ہی نشانہ بنایا گیا ہو۔ تجزیہ کار کا کہنا ہے کہ دیگر ٹارگٹڈ صارفین بھی کراچی کے پوش علاقوں میں مقیم ہیں۔ 

 لیک ہونے والی معلومات بڑی حد تک بیکار ہے لیکن یہ ظاہر کرتی ہے کہ ذاتی ڈیٹا کی خلاف ورزیاں تشویش کا باعث ہیں۔ 

پاکستان میں ڈیٹا کی خلاف ورزیاں بہت عام

جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے، پاکستان میں ڈیٹا کی خلاف ورزیاں بہت عام ہوتی جا رہی ہیں۔ گزشتہ ماہ سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان کا کچھ حساس ڈیٹا لیک ہوا تھا جس کے نتیجے میں چیئرمین اور متعلقہ کمشنر کے درمیان ہاتھا پائی ہوئی تھی۔ لیک ہونے والے ڈیٹا میں کمپنی کے سی ای اوز کی نجی معلومات شامل تھیں جن میں شناختی کارڈ نمبر، ای میل ایڈریس، رہائشی پتے اور بہت کچھ شامل تھا۔ 

 سب سے زیادہ تشویشناک بات یہ ہے کہ انفارمیشن سیکیورٹی کے سربراہ مبشر سدوزئی نے اس خلاف ورزی کا سراغ نہیں لگایا۔ اس کی نشاندہی تب ہوئی جب ننی ویب سائٹ نے 27 جولائی کو انکوائری بھیج کر ریگولیٹر کو آگاہ کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔