‘ہم اکٹھے کھڑے ہیں’ انیشی ایٹو کی پاکستان کے سیلاب متاثرین کو 1,200 ٹن خوراک سمیت 30 ہزار فوڈ کٹس کی فراہمی

‏متحدہ عرب امارات نے انسانیت کے ناطے اپنے جذبے کے تحت، ساتوں امارات سے سینکڑوں رضاکاروں نے “ووئی اسٹینڈ ٹوگیدر” اقدام میں شمولیت اختیار کی ہے۔ اس اقدام کے حصے کے طور پر، 1,200 ٹن خوراک فراہم کی گئی ہے جس میں صحت اور روز مرہ کی ضروریات کا دیگر سامان شامل ہے جبکہ 30 ہزار فوڈ کٹس بھی شامل ہیں۔ متحدہ عرب امارات متاثرہ افراد کو ہنگامی امداد فراہم کرنے والے اولین ممالک میں شامل ہے اور امدادی کٹس پاکستان کو ہنگامی بنیادوں پر پہنچائی جائیں گی۔ 

 کمیونٹی رضاکارانہ تقریب میں تمام عمروں اور قومیتوں کے شہریوں اور رہائشیوں کو ملک بھر میں تین مقامات پر جمع ہوتے دیکھا گیا ہے جن میں ابوظہبی نیشنل ایگزیبیشن سینٹر ، ایکسپو سٹی دبئی اور ایکسپو سینٹر شارجہ شامل ہیں جو چار گھنٹے میں امدادی کٹس پیک کرتے ہیں۔ 

امارات ریڈ کریسنٹ (ای آر سی)، دبئی کیئرز اور شارجہ چیریٹی انٹرنیشنل نے “ہم اکٹھے کھڑے ہیں” کا اقدام متحدہ عرب امارات میں وزارت برائے کمیونٹی ڈویلپمنٹ اور وزارت خارجہ اور بین الاقوامی تعاون کے ساتھ مل کر شروع کیا جس میں متحدہ عرب امارات کی 9 دیگر فلاحی تنظیموں نے بھی تعاون کیا جن میں خلیفہ بن زاید النہیان فاؤنڈیشن، محمد بن راشد المکتوم ہیومینٹیرین اینڈ چیریٹی اسٹیبلشمنٹ، دی بگ ہارٹ فاؤنڈیشن، دارالبیر، انٹرنیشنل ہیومینٹیرین سٹی، یو اے ای واٹر ایڈ فاؤنڈیشن (سوقیہ یو اے ای)، چیریٹی ہاؤس، انٹرنیشنل چیریٹی آرگنائزیشن اور ایمریٹس چیریٹیبل ایسوسی ایشن شارجہ شامل ہیں۔

 اس کمیونٹی ایونٹ کے ایک حصے کے طور پر، رضاکاروں کی مختلف ٹیموں کے گروپ بنائے گئے ہیں تاکہ امدادی کٹس کی پیکنگ میں مدد کی جا سکے۔ اشیائے خوردونوش میں آٹا، چاول، دال، تیل اور دیگر غیر خراب ہونے والی اشیاء شامل ہیں جبکہ حفظان صحت کی کٹس میں خواتین اور بچوں کے لیے بیت الخلا کا ضروری سامان جیسے ڈائپر، سینیٹری پیڈز اور صابن وغیرہ شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | متحدہ عرب امارات کی پاکستان کو ہنگامی بنیادوں پر امداد کی ترسیل جاری

یہ بھی پڑھیں | ۹ اماراتی فلاحی تنظیموں کی پاکستان کی حمایت میں “ہم اکٹھے کھڑے ہیں” انیشی ایٹو میں شمولیت

 ای آر سی کے سیکرٹری جنرل حمود عبداللہ الجنیبی نے پاکستان میں بارشوں اور سیلاب سے ہونے والی تباہی کو کم کرنے کے لیے “ہم اکٹھے کھڑے ہیں” اقدام کو کامیاب بنانے میں رضاکاروں کے کردار کی تعریف کی ہے۔ 

جنرل حمود عبداللہ الجنیبی نے پاکستان میں متحدہ عرب امارات کے قائدانہ کردار کو مضبوط بنانے میں 12 فلاحی تنظیموں کے اتحاد کے اہم کردار کا بھی اعتراف کیا ہے۔

 جنرل حمود عبداللہ الجنیبی نے مزید کہا کہ یہ اتحاد متحدہ عرب امارات کے فلاحی کاموں کے اتحاد کو مضبوط کرتا ہے اور زندگی کو بہتر بنانے اور آفات اور بحرانوں کی وجہ سے متاثرین کی تکالیف کو کم کرنے سے متعلق ایک اہم ترین شعبے میں شراکت داری کی قدر کا تعین کرتا ہے۔

دبئی کیئرز کے چیف ایگزیکٹو آفیسر اور وائس چیئرمین ڈاکٹر طارق ال گرگ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کی بحران میں مدد کرنے والے ممالک کی ایک طویل تاریخ ہے اور ملک گیر رضاکارانہ اقدام “ووئی اسٹینڈ ٹوگیدر” کی شاندار کامیابی اس بات کی واضح عکاسی ہے۔ اس دوران پاکستان کی حمایت کے لیے ہر عمر اور قومیت کے سینکڑوں رضاکاروں کا اکٹھا ہونا، سخاوت اور ہمدردی کی گہری ثقافت کو اجاگر کرتا ہے جس پر متحدہ عرب امارات کی کمیونٹی کو فخر ہے۔ اس اقدام کے لیے اپنا وقت دینے اور اسے متحدہ عرب امارات کی ایک اور کامیابی کی کہانی میں بدلنے کے لیے تمام رضاکاروں کا تہہ دل سے شکریہ۔

 شارجہ چیریٹی انٹرنیشنل کے چیف ایگزیکٹو آفیسر عبداللہ سلطان بن خادم نے کہا کہ “ووئی سٹینڈ ٹوگیدر” اقدام کی کامیابی اور اس کے اہداف کے حصول کے لیے اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں۔ امدادی کٹس تیار کر کے پاکستان میں سیلاب سے متاثر ہونے والوں کے لیے بھیجی جائیں گی۔ یہ اقدام شہریوں اور رہائشیوں، خواتین، مردوں، نوجوانوں سمیت تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کی ہم آہنگی کی اقدار کو ظاہر کرتا ہے۔ 

ہم نے ‘پے بیک’ کے جذبے کے ساتھ کام کیا ہے جس کی جڑیں متحدہ عرب امارات کی وسیع تر کمیونٹی میں موجود ہیں۔ متاثرہ لوگوں کی مدد کا یہ اقدام مرحوم شیخ زاید کی اقدار کی عکاسی کرتا ہے۔ متحدہ عرب امارات کے بانی نے ہمیں یہی درس دیا ہے۔ ہمیں یہ اقدار نسل در نسل وراثت میں ملی ہیں تاکہ دنیا بھر میں ضرورت مندوں اور متاثرہ افراد کی مدد کی جا سکے۔

دبئی انٹرنیشنل اکیڈمی کے گریڈ 11 کے طالب علم، ٹیا الجیوسی اور صوفیہ طحہ نے کہا کہ سیلاب کی وجہ سے اس وقت انہیں واقعی ہماری مدد کی ضرورت ہے۔ نوجوان رضاکاروں نے بھی آگے آکر مثبت پیغامات دئیے جیسے کہ “ہر بادل پر چاندی کی لکیر ہوتی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمیشہ امید ہوتی ہے”، “ہم یہاں آپ کو بچانے کے لیے ہیں؛ ہم ایک ساتھ ہیں”، ” گڈ لک اور محفوظ رہیں پاکستان”، “میں جانتا ہوں کہ ہم مل کر اس سے نجات حاصل کریں گے” یہ وہ پیغامات ہیں جو اس تباہ کن قدرتی آفت سے متاثرہ خاندانوں کی مدد کے لیے امدادی کٹس کے اندر رکھے گئے۔

 “ہم نے پاکستان میں جو کچھ ہو رہا ہے اس سے سیکھا ہے اور اب ہم “ووئی سٹینڈ ٹوگیدر” اقدام کے ذریعے حمایت کرنا چاہتے ہیں۔ ملک میں جو کچھ ہو رہا ہے وہ واقعی افسوسناک ہے۔ ہمیں متاثر لوگوں کے لیے مثبت اور حوصلہ افزا پیغامات لکھ کر اس اقدام میں حصہ ڈال کر خوشی ہوئی ہے”

متحدہ عرب امارات میں رہنے والے ایک نوجوان ڈاکٹر فادی السیغ نے کہا کہ ہم سب دیکھ رہے ہیں کہ پاکستان میں کیا ہو رہا ہے اور ہمارے بہت سے دوستوں کے رشتہ دار متاثر ہوئے ہیں۔ درحقیقت میرے ایک دوست کے والدین سیلاب کی وجہ سے بے گھر ہو گئے ہیں اور ریسکیو ٹیم کو انہیں تلاش کرنا پڑا۔ اس دوران ہم سب کو اکٹھے ہونے اور پاکستان کی حمایت کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ ہم ایک عالمی خاندان ہیں۔ مجھے متحدہ عرب امارات کا رہائشی ہونے پر بھی فخر ہے جہاں ہم “ہم اکٹھے کھڑے ہیں” جیسے اقدامات کی حمایت کرتے ہوئے مدد کے لیے کچھ کر سکتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔