گورنمنٹ لوڈ شیڈنگ کو کم کرنے کے بہتر آپشنز پر غور کر رہی ہے، وزیر اعظم

  وزیراعظم شہباز شریف نے الزام عائد کیا ہے کہ ملک میں لوڈشیڈنگ کی ذمہ دار پچھلی حکومت ہے کیونکہ انہوں نے اس وقت گیس نہیں خریدی جب اس کی قیمت کم ترین سطح پر تھی۔ 

لوڈشیڈنگ سے متعلق اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ گزشتہ حکومت نے گیس کی قیمت پانچ ڈالر پر ہونے پر طویل مدتی معاہدہ نہیں کیا تھا اور پاور پلانٹس کی بحالی میں تاخیر کی ذمہ دار حکومت ہے۔

 مزید برآں، وزیراعظم نے کہا کہ ایندھن کی قیمتوں کی وجہ سے صورتحال مزید تیز ہوئی جو دہائیوں کی بلند ترین سطح پر ہے۔

بین الاقوامی مارکیٹ میں گیس بھی بہت مہنگی

 وزیراعظم نے کہا کہ بین الاقوامی مارکیٹ میں گیس بھی بہت مہنگی ہو گئی ہے اور مہنگے درآمدی ایندھن سے بجلی پیدا کرنے سے چاہے گیس ہو، کوئلہ ہو یا تیل سے زرمبادلہ کے ذخائر پر سنگین اثرات مرتب ہوں گے، اس لیے حکومت بہترین آپشنز تلاش کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف کا نوجوانوں کے آئیڈیاز کے لئے “انوویشن ہب” کا آغاز

یہ بھی پڑھیں | بکرا عید: پاکستان میں عید الاضحی 10 جولائی کو ہو گی

 پچھلی حکومت کے لیے گیس خریدنے کا موقع تھا لیکن ایسا نہیں کیا گیا اور اگر وہ گیس خرید لیتے تو یہ صورتحال اتنی خراب نہ ہوتی اور ملک کو اس وقت گیس اور بجلی کے بحران کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔ 

 وزیر اعظم نے کہا کہ موجودہ حکومت نے حالیہ ہفتے میں ٹینڈرز طلب کیے لیکن کسی نے بولی نہیں دی اور نہ ہی بولی جمع کروائی۔ انہوں نے کہا کہ اگر گیس کا ٹینڈر بھی موصول ہوا تو وہ بہت مہنگا تھا اور حکومت نے مہنگی گیس نہ خریدنے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم چینی کمپنیوں کے لیے ریوالونگ اکاؤنٹ بھی دے رہے ہیں جو پچھلی حکومت نے نہیں کھولے تھے، انہوں نے مزید کہا کہ حکومت پاور پلانٹس کو جلد از جلد آپریشنل کرنے کی بھی کوشش کر رہی ہے۔ 

 انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کو اقتدار میں آتے ہی یہ حقیقی چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا تاہم ملک میں لوڈ شیڈنگ کو کم کرنے کے لیے ان سے نمٹنے کے عزم کا اظہار کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں