کرپٹو کرنسی کا کوئی اچھا استعمال نہیں ہے، گورنر سٹیٹ بینک آف پاکستان

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر رضا باقر نے کرپٹو کرنسی کے بارے میں اپنا موقف دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس کے استعمال کا کوئی ایسا فائدہ نہیں ہے جس سے مالی شمولیت یا جدت جیسے اہداف کو آگے بڑھایا جا سکتا ہے۔

  اتوار کو 13ویں کراچی لٹریچر فیسٹیول میں ایک پینل ڈسکشن کے دوران، مسٹر باقر نے اس بات پر اتفاق کیا کہ کرپٹو کے پیچھے بنیادی ٹیکنالوجی – یعنی ڈسٹری بیوٹڈ لیجر – “بالکل مفید ٹیکنالوجی ہے” اور اس میں دنیا کو درپیش بہت سے مسائل کو حل کرنے کی صلاحیت ہے۔ 

تاہم، جب ہم ابھی کرپٹو کی طرف سے پیش کردہ ویلیو پروپوزل کو دیکھتے ہیں، تو استعمال کے معاملات جو سامنے لائے گئے ہیں وہ صرف تبدیل ہوئے ہیں۔

 انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ لوگ چاہتے ہیں کہ ریگولیٹر بٹ کوائن کے استعمال کی اجازت دے، اس پر قیاس آرائیاں کریں اور پھر بیرون ملک بھی رقم کی منتقلی آسان ہو جائے۔

ہر نئی چیز کے کچھ فوائد اور کچھ خطرات ہوتے ہیں۔ بیلنس کا اندازہ لگانا ایک پالیسی ساز کا کام ہے۔

 خاص طور پر، یہ فیصلہ کرنا کہ آیا پاکستان میں کرپٹو کرنسیوں کے استعمال کے حوالے سے فوائد خطرات سے زیادہ ہیں یا نہیں یہ سب ہمیں دیکھنا ہوتا ہے۔ 

 اسٹیٹ بینک کے گورنر نے کرپٹو کرنسیوں میں آپشنز کی کمی پر بھی سوال اٹھایا۔

 ایسا کوئی طریقہ نہیں ہے کہ ریگولیٹر یا قانون نافذ کرنے والے ادارے کے پاس اس بات کا آپشن ہو کہ وہ چیک کر سکے کہ کون لین دین کر رہا ہے اور کس مقصد کے لیے۔ اور، اس لیے، دنیا بھر میں کریپٹو کرنسی کا بہت زیادہ غلط استعمال ہوتا ہے، جس میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں، لوگوں کی اسمگلنگ، منی لانڈرنگ اور بہت سی دوسری چیزیں شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان اور ازبکستان کا مسئلہ افغانستان پر رابطہ رکھنے کا اعلان

انہوں نے عالمی منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی معاونت کے نگران ادارے فنانشل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ گورنر سٹیٹ بینک کا کلیدی ہدف مالی شمولیت کو فروغ دینا اور مالیاتی نظام کے غلط استعمال کو روکنا یے خاص طور پر اس لیے کہ پاکستان ایک ایسا ملک ہے جو ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں ہے۔

  انہوں نے یہ بھی بتایا کہ پاکستان میں مالیاتی نظام ماضی میں یا تو پیسے یا دہشت گردی کی مالی معاونت کے لیے استعمال ہوتا رہا ہے۔ 

یاد رہے کہ قپاکستان نے کرپٹو کرنسی کی تجارت اور کان کنی میں تیزی دیکھی ہے، سوشل میڈیا پر متعلقہ ویڈیوز اور آن لائن ایکسچینجز پر لین دین کے ہزاروں خیالات میں دلچسپی بڑھ رہی ہے۔ 

اگرچہ پاکستان میں کریپٹو کرنسی غیر قانونی نہیں ہے، ایف اے ٹی ایف نے حکومت سے صنعت کو بہتر طریقے سے منظم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

 تاہم، اسٹیٹ بینک کے گورنر کے خیالات ایسی کرنسیوں کے خلاف بڑھتے جا رہے ہیں۔ انہوں نے پچھلے مہینے کہا تھا کہ کریپٹو کرنسی کے فوائد سے زیادہ خطرات ہیں لیکن مرکزی بینک مستقبل کی ممکنہ کرنسیوں سے ہم آہنگ ہونے کے لیے کام کر رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں