کراچی یونیورسٹی ہراساں کیس میں 6 مشتبہ لوگوں کو گرفتار کر لیا گیا

جمعرات کو پولیس نے کراچی یونیورسٹی کے احاطے میں طلبہ کو ہراساں کرنے کے الزام میں چھ مشتبہ افراد کو گرفتار اور ان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے۔

 ملزمان کے خلاف درج مقدمہ میں دفعات میں ہراساں کرنا ، زبانی زیادتی ، شکایت کنندہ کے راستے میں رکاوٹ اور دیگر شامل ہیں۔ یہ معاملہ گذشتہ رات اس وقت منظرعام پر ایا جب ایک طالب علم جو ایک کار میں دو خواتین دوستوں کے ساتھ جا رہا تھا ، نے سوشل میڈیا پر  شیئر کیا۔

 طالب علم کے بیان کے مطابق ، یہ تینوں طلباء میں سے ایک طالب علم کو آئی بی اے ہاسٹل میں چھوڑنے کے لئے کراچی یونیورسٹی کے احاطے میں جا رہا تھا۔ ہاسٹل سے واپسی کے راستے میں ، دونوں طلباء کو چار موٹرسائیکلوں پر سوار 10 کے قریب نوجوانوں نے گھیر لیا۔ مبینہ طور پر ہراساں کرنے والوں نے کار کا تعاقب کیا ، خاتون طالبہ کو باہر آنے کا کہت6لے رہے اور ایک موقع پر گاڑی کو روکنے پر مجبور کیا جبکہ  گاڑی کا ڈرائیور کسی طریقے  سیکیورٹی چیک پوسٹ تک پہنچ گیا۔ 

 نواجوان نے بتایا کہ دونوں طلباء نے انتہائی عدم تحفظ محسوس کیا ہے  اور انہوں نے اس پوسٹ کو موٹر وے کا ایک اور ممکنہ واقعہ قرار دیا تھا۔ طالب علم کے فراہم کردہ بیان کے مطابق مبینہ ہراساں کرنے والوں کی عمریں 15 سے 25 سال تھیں۔ واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہ یہ واقع یونیورسٹی کے احاطے میں ہوا ، کراچی یونیورسٹی کے سیکیورٹی کے مشیر ڈاکٹر معیز خان نے بتایا کہ واقعے میں ملوث مبینہ ہراساں کرنے والوں کی شناخت کل رات ہوئی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ متاثرہ افراد کو ہراساں کرنے والوں کی شناخت کرنی ہوگی تاکہ یونیورسٹی اس کیس کو مزید آگے لے جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی جبکہ انہوں نے یہ انکشاف بھی کیا کہ شناخت شدہ ملزم نابالغ اور یونیورسٹی کے عملے کے بچے ہیں۔ 

اس واقعے کے بعد ٹویٹر پر #کراچی_یونیورسٹی_از_ناٹ_سیف ٹاپ ٹرینڈ بن گیا  جس میں طلباء نے انتظامیہ سے فوری کارروائی کا مطالبہ کیا۔ ٹویٹر پر ایک صارف نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ جامعہ کراچی حالیہ واقعے کے خلاف فوری اور سخت کارروائی کرے۔ یہ اور بھی خراب ہوسکتا تھا۔ خدا ایسا نہ کرے ، یہ واقعی برا ہوسکتا تھا۔ اسے آسانی سے جانے نہ دیں۔ ہمیں عہدیداروں کو اس کو سنجیدگی سے لینے کے لئے کہنا ہے۔ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *