کراچی میں ہزاروں افراد کو موسمیاتی تبدیلی اور پلازہ مسماری کے خلاف احتجاج

کراچی میں ہزاروں افراد نے سڑکوں پر نکل کر مطالبہ کیا کہ صوبائی اور وفاقی حکومتیں موسمیاتی تبدیلیوں کے خلاف جنگ میں دلیرانہ کارروائی کریں اور مکانوں اور پلازوں زبردستی مسماری ختم کی جائے۔

 تفصیلات کے مطابق اس مارچ میں خواتین، نوجوانوں، بچوں اور مردوں نے شرکت کی جو نہر خیام سے شروع ہو کر بلاول چوک تک پہنچا۔ مظاہرے کا آغاز دوپہر 2 بجے ہوا۔  گجر اور اورنگی نالہ پر مسماری کی کارروائیوں سے بے گھر ہونے والے لوگوں نے مارچ میں شرکت کی۔ 

 مظاہرین نے بلاول چوک کی طرف مارچ شروع کیا تو پولیس نے انہیں روک دیا۔ مذاکرات کے بعد مارچ دوبارہ شروع ہوا۔ تاہم، مظاہرین کو صرف کراچی گرامر اسکول کی طرف جانے کی اجازت دی گئی۔ 

مارچ کرنے والے کراچی گرائمر سکول کی طرف بڑھے اور وہاں دھرنا دے دیا۔ 

ان کے مطالبات کیا ہیں؟

 ہ مارچ کرنے والوں کے چند اہم مطالبات تھے: 

– پسماندہ برادریوں کی جبری نقل مکانی کا خاتمہ 

–  کراچی میں پانی کے بحران کا خاتمہ اور صاف پینے کا پانی

 مظاہرین حکومت کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے اپنے حقوق کا مطالبہ کر رہے تھے۔

یہ بھی پڑھیں | سندھ کی پاکستان سے علیحدگی کا اشارہ، مراد علی شاہ پر سخت تنقید

یہ بھی پڑھیں | کراچی بس پراجیکٹ کے کریڈٹ پر ن لیگ، پی ٹی آئی اور پیپلرز پارٹی گتھم گتھا

ایک پلے کارڈ میں لکھا تھا ” ہم کیا چاہتے ہیں، اپنی زمین، ” یہ نعرہ مارچ میں سب سے زیادہ مقبول نعروں میں سے ایک تھا کیونکہ مظاہرین نے اپنے سروں پر چھت اور زمین  کا مطالبہ کیا جو کہ ان سے چھین لی گئی ہء۔

 اورنگی اور گجر نالے کے متاثرین کے ایک مظاہرین اور نمائندے سید عارف نے نجی چینل کو بتایا کہ سندھ حکومت کی جانب سے ابھی تک طوفانی نالوں کے قریب رہنے والے لوگوں کو معاوضہ نہیں دیا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ لوگ کھلے آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ 

 دوسری جانب کچھ متاثرین کا کہنا تھا کہ معاوضہ کافی نہیں ہے۔ وہ چاہتے تھے کہ حکومت انہیں متبادل رہائش فراہم کرے۔ 

 اورنگی ٹاؤن کے ایک رہائشی نے بتایا کہ ایک گھر کی تعمیر میں برسوں لگتے ہیں۔ اس کے لیے محنت درکار ہے۔ آپ صرف پیسے دے کر ہم سے معمول پر آنے کی امید کیسے کر سکتے ہیں؟ کیا آپ کو کبھی اپنے گھر سے نکالا گیا ہے؟ کیا تم نے اپنی آنکھوں کے سامنے اپنا گھر گرتے دیکھا ہے؟‘

 ایک اور مارچ کرنے والے، احمد شبر، ایک ماہر ماحولیات، نے بتایا کہ 2019 میں مارچ آگاہی کے لیے کیا گیا تھا۔ اس سال یہ ایک احتجاج ہے اور ہمارا مقصد رہائش اور زمین کے حقوق ہے۔

انہوں نے کہا کہ اشرافیہ یا اقتدار میں رہنے والے لوگوں کو بے گھر نہیں کر سکتے جیسا کہ انہوں نے نالہ متاثرین کے ساتھ کیا ہے۔ آپ نے لوگوں کو ڈی ایچ اے میں رہنے کی اجازت دی ہے حالانکہ یہ ثابت ہو چکا ہے کہ علاقے کو زمین پر دوبارہ دعوی کرنے کا کوئی قانونی حق نہیں ہے۔

انہوں نے سندھ انوائرمنٹ پروٹیکشن ایجنسی (سیپا) کو ایک “دھوکہ” قرار دیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں