مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

کراچی جوڑے نے کار لون سکیم کے چکر میں فراڈ کر دیا

کراچی کے تین تھانوں کی پولیس ایک بڑے فراڈ کی تحقیقات کر رہی ہے جس میں نام نہاد کار فنانسنگ فرم چلانے والے ایک جوڑے نے سیکڑوں صارفین سے لاکھوں روپے کا سامان چھین لیا اور اپنے دفتروں کو بند کرنے کے بعد بغیر کسی سراغ کے غائب ہوگئے۔ 

تفصیلات کے مطابق بٹ اینڈ سنز پرائیوٹ لمیٹڈ نے گلشنِ اقبال ، طارق روڈ اور ڈی ایچ اے میں دو برسوں کے دوران تین برانچیں کھولیں۔ اب تک اس کے خلاف تین تھانوں میں چودہ ایف آئی آر درج کی جاچکی ہیں۔ 

مالکان کے خلاف عزیز بھٹی پولیس اسٹیشن میں سات ، ایفروز آباد میں پانچ اور ڈیفنس پولیس اسٹیشن میں دو ایف آئی آر درج کی گئیں۔ 

کار لون اسکام نے او ایل ایس اور فیس بک اکاؤنٹ پر اشتہار پوسٹ کرکے درخواستوں کو مدعو کیا۔ اس نے صارفین کو 5 فیصد شرح سود پر اپنی پسند کی کار پیش کی۔ یہ بہت زیادہ پرکشش تھا کیونکہ عام طور پر بینکوں کے پاس 11 فیصد سود کی شرح پر کار ملتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | لنکڈ ان فری لانس سروسز کے لئے اسپیشل فیوچر بنانے جا رہی ہے

 کمپنی نے درخواست دہندگان سے کہا کہ وہ کاغذی کارروائی کے لئے اپنی تین دکانوں میں سے ایک کے پاس ذاتی طور پر آئیں۔ جب کوئی درخواست دہندہ برانچ پہنچا تو اس سے کہا گیا کہ پہلے انکوائری آفیسر سے ملنا۔ اس افسر نے درخواست گزار کی رہائش اور قبضے سے متعلق سوالات پوچھے اور پھر انھیں منیجر کے پاس بھیجا۔ 

درخواست گزار نے فرم کے ساتھ معاہدے پر دستخط کیے اور مکالمہ میں طے شدہ ادائیگی کی۔ یہ معاہدے میں تھا کہ انکوائری آفیسر درخواست دہندہ کے اسناد اور دو ضمانت دہندگان کی تصدیق کرے گا۔ 

معاہدے میں کہا گیا ہے کہ تصدیق کے عمل کو مکمل ہونے میں پندرہ دن لگتے ہیں ، نیچے ادائیگی کے دن سے شروع ہوتا ہے اور اگر کوئی درخواست دہندہ تصدیق کے آغاز سے پہلے معاہدہ منسوخ کرتا ہے تو اس کی نیچے ادائیگی سے 26 فیصد کٹوتی کی جائے گی۔ 

معاہدے میں ترسیل اور قسط کی ادائیگی سے متعلق کچھ دیگر شرائط کا تذکرہ کیا گیا تھا ، لیکن ایک بار نیچے ادائیگی ہونے کے بعد یہ عمل کبھی حرکت میں نہیں آیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔