مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

ڈالر کی اونچی اڑان؛ روپیہ اب تک کی کم ترین قیمت پر آ گیا

منگل کے روز روپیہ اب تک کی کم ترین قیمت پر آ گیا ہے جس کی وجہ سے ڈالر نےاونچی اڑان بڑھ لی ہے۔

  بڑھتے ہوئے فوڈ امپورٹ بل اور ایکسپورٹ میں سست روی نے روپے کو خطرے میں ڈال دیا ہے اور آؤٹ لک مندی کا شکار ہے۔ 

انٹر بینک مارکیٹ میں روپے کے مقابلے میں ڈالر 168.94 کا ہے جو پیر کے روز 168.10 تھا۔ 

سنٹرل بینک کے اعداد و شمار کے مطابق اگست 2020 میں سابقہ ​​سب سے کم ریٹ 168.43 تھا۔ 

 ایکسچینج کمپنیز ایسوسی ایشن آف پاکستان کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ مارکیٹ میں ڈالر کے مقابلے میں روپیہ 169.60 کی تاریخ کی کم ترین سطح پر آگیا ہے۔

 پچھلے سال اگست میں 169.80 کا ریکارڈ قائم کیا گیا تھا۔ 

ایک کمرشل بینک کے ایک ڈیلر نے بتایا کہ درآمد کنندگان سے ڈالر کی مانگ کے وزن کی وجہ سے ڈالرز کی فراہمی ناکافی رہی ہے۔ 

 تجزیہ کاروں نے کہا کہ درآمدات میں تیزی سے اضافہ بین الاقوامی اشیاء کی قیمتوں بالخصوص تیل اور مضبوط گھریلو طلب کی وجہ سے ہوا ہے۔ درآمدات نے گزشتہ تین ماہ میں دوسری بار 6 بلین ڈالر کا ہندسہ عبور کیا اور گزشتہ 6 ماہ کے دوران 5 بلین ڈالر سے اوپر رہا۔

اشیاء کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے معاشی سرگرمیوں میں اضافے نے روپے پر دباؤ ڈالا ہے کیونکہ اسٹیٹ بینک آف پاکستان فاؤنڈیشن سیکیورٹیز میں تجزیہ کار محمد اویس اشرف نے کہا کہ اسے دفاع کی پہلی لائن کے طور پر استعمال کر رہا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | خیبر پختونخواہ مستحق خاندانوں کو فری طبی سہولیات فراہم کرنے والا پہلا صوبہ بن گیا

انہوں نے مزید کہا کہ شپنگ ریٹس میں اضافے نے صورتحال کو مزید خراب کر دیا ہے کیونکہ شنگھائی سے کراچی کی درآمد کے لیے فریٹ چارجز 9000 ڈالر سے تجاوز کر چکے ہیں۔ عالمی اشیاء کی قیمتوں میں اضافے کے بعد سے ملک کے درآمدی بل میں اضافے کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔ اسٹیٹ بینک کی عارضی اقتصادی ری فنانس سہولت کے تحت رواں مالی سال کاروباری اداروں سے نئی فیکٹریاں قائم کرنے اور موجودہ پلانٹس کو بڑھانے کے لیے خام مال اور سرمائے کی اشیاء کی درآمدات کی توقع ہے۔ اس سے مقامی یونٹ پر دباؤ پڑتا ہے۔ 

تجارتی خسارہ صرف اگست میں سالانہ 133 فیصد بڑھ کر 4.05 بلین ڈالر ہو گیا ہے۔ یہ رواں مالی سال کے پہلے دو ماہ میں 114 فیصد اضافے کے ساتھ 7.32 بلین ڈالر تک پہنچ گیا ہے

 اگست میں درآمدات 89.9 فیصد بڑھ کر 6.31 بلین ڈالر ہو گئیں جبکہ برآمدات 42.5 فیصد بڑھ کر 2.25 بلین ڈالر ہو گئیں۔ 

ماہرین نے روپیہ کی قدر میں کمی کی وجہ افغانستان کے موجودہ حالات کو بھی قرار دیا ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔