پیٹرول کی قیمت میں 12 روپے فی لیٹر کا اضافہ کر دیا گیا

وفاقی حکومت نے منگل کو پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 12.03 روپے فی لیٹر تک کا زبردست اضافہ کر دیا ہے جس کے بعد پٹرول کی قیمت 159.86 روپے فی لیٹر کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گئی جس کا اطلاق 16 فروری (آج) سے ہو گا۔ 

پیٹرول کی قیمت 160 روپے فی لیٹر کی سطح پر پہنچ کر گزشتہ تمام ریکارڈ توڑ دئیے ہیں۔

 تاہم وزارت خزانہ نے ایک بیان میں کہا کہ بین الاقوامی مارکیٹ میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں زبردست اضافہ دیکھا جا رہا ہے اور اس وقت یہ 2014 کے بعد بلند ترین سطح پر ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | مہنگائی دو سال کی بلند ترین شرح پر پہنچ گئی

 اس میں کہا گیا ہے کہ سال کے آغاز سے قیمتوں میں بے لگام اضافے کے باوجود وزیراعظم عمران خان نے 31 جنوری 2022 کو پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا آخری جائزہ موخر کردیا اور آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی کی سمری کے خلاف مشورہ دیا۔ 

 صارفین کو انتہائی ریلیف فراہم کرنے کے لیے حکومت نے بجٹ کے اہداف کے مقابلے میں صفر فیصد سیلز ٹیکس لگایا اور پیٹرولیم لیوی میں کمی کی۔ 

اس کے نتیجے میں، وزارت خزانہ نے کہا کہ حکومت پٹرولیم لیوی اور سیلز ٹیکس کے اقدامات کی وجہ سے پندرہ دن کی بنیاد پر تقریباً 35 ارب روپے کا ریونیو نقصان برداشت کر رہی ہے۔ 

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے پندرہ روزہ جائزے میں وزیراعظم نے بین الاقوامی تیل کی قیمتوں میں تبدیلی کے مطابق پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی سفارش پر غور کیا ہے۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود پیٹرولیم لیوی اور سیلز ٹیکس کو کم سے کم رکھا گیا ہے۔

 پٹرول اب 147.83 روپے فی لیٹر کے بعد  159.86 روپے میں دستیاب ہوگا۔ 

 پٹرول کمپریسڈ قدرتی گیس (سی این جی) کا متبادل ہے اور کاروں اور موٹر سائیکلوں میں استعمال ہوتا ہے۔ پنجاب میں سی این جی ریٹیل آؤٹ لیٹس میں دیسی گیس نہیں ہے۔ 

 وہ درآمد شدہ مائع قدرتی گیس کا استعمال کرتے ہیں اور اس لیے تازہ اضافہ متوسط ​​طبقے کے لوگوں کی مشکلات میں اضافہ کرے گا جو موٹر سائیکلوں اور چھوٹی کاروں میں پیٹرول استعمال کرتے ہیں۔ 

حکومت نے ہائی اسپیڈ ڈیزل  کی قیمت میں بھی زبردست اضافہ کیا ہے۔ 

 یہ ایندھن ٹرانسپورٹ اور زراعت کے شعبوں میں استعمال ہوتا ہے۔ لہذا، ڈیزل کی قیمت میں اضافے کا براہ راست افراط زر کا اثر ان لوگوں پر پڑے گا جو پہلے ہی بلند افراط زر کی زد میں ہیں۔ 

حکومت نے ڈیزل کی قیمت میں 9.53 روپے فی لیٹر اضافہ کر دیا ہے۔ اس کی قیمت 144.62 روپے فی لیٹر سے بڑھ کر 154.15 روپے ہو گئی ہے۔ 

مٹی کے تیل کی قیمت میں بھی 10.08 روپے فی لیٹر اضافہ کیا گیا ہے۔

 یہ ایندھن پاکستان کے دور دراز علاقوں جیسے ملک کے شمالی علاقوں میں استعمال ہوتا ہے جہاں کھانا پکانے کے لیے مائع پیٹرولیم گیس دستیاب نہیں ہے۔

 پاکستانی فوج بھی اسے شمالی علاقوں میں استعمال کرتی ہے۔

 اب یہ 116.48 روپے فی لیٹر کے مقابلے میں 126.56 روپے میں فروخت ہوگا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔