مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

پاکسستان کو یقین دلاتے ہیں کہ اسے افغانستان سے کوئی خطرہ نہیں، طالبان

 طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے جمعہ کو کہا ہے کہ پاکستان کو یقین دلاتے ہیں کہ اسے افغانستان سے کوئی خطرہ نہیں ہوگا۔ 

اسلام آباد میں پاکستان نیشنل کونسل آف دی آرٹس میں پاک افغان یوتھ فورم کے زیر اہتمام پاک افغان یوتھ فورم کے زیر اہتمام ایک بین الاقوامی کانفرنس سے آن لائن  خطاب کرتے ہوئے ترجمان طالبان نے کہا کہ افغانستان کو امید ہے کہ افغان قوم کے لیے پاکستان کی کوششیں اور دوطرفہ تجارت جاری رہے گی۔ 

 ترجمان نے کہا کہ افغانستان افغان عوام کے لیے پاکستان کی دیرینہ شراکت کو سراہتا ہے۔ 

طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے پچھلے ہفتے جیو نیوز کے پروگرام “جرگہ” میں انٹرویو کے دوران کہا تھا کہ تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کا مسئلہ پاکستان حکومت کا ہے افغانستان کا نہیں۔ شو کے میزبان سلیم صافی نے ترجمان سے پوچھا کہ کیا طالبان ٹی ٹی پی سے بات کریں گے کہ وہ پاکستان کے ساتھ جنگ نا کریں۔ اس کے جواب میں انہوں نے کہا کہ مستقبل کی حکومت اس بارے میں واضح کہے گی۔ تاہم ، ہمارا اصولی موقف یہ ہے کہ ہم کسی دوسرے کے ملک میں امن کو تباہ کرنے کے لیے اپنی سرزمین کے استعمال کی اجازت نہیں دیں گے۔

یہ بھی پڑھیں | روپیہ دو سال کی بلند ترین قیمت پر آ گیا 

انہوں نے کہا کہ اگر ٹی ٹی پی افغان طالبان کو اپنا لیڈر مانتی ہے تو انہیں ان کی بات ماننی پڑے گی ، چاہے وہ اسے پسند کریں یا نہ کریں۔

 طالبان ترجمان نے مزید کہا تھا کہ ٹی ٹی پی کے مسئلے  سے پاکستان کو نمٹنا ہو گا ، افغانستان کو نہیں۔ یہ پاکستان پر منحصر ہے ، اور پاکستانی علماء اور مذہبی شخصیات پر اس کا دارومدار ہے کہ وہ طالبان کے غلط درست کا فیصلہ کریں۔ 

کانفرنس میں ترجمان طالبان نے چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی ہیک) کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ راہداری کی توسیع ، جو اسے افغانستان سے جوڑتی ہے ، بہت اہم ہے۔ 

 جمعرات کو اطالوی اشاعت لا ریپبلیکا میں شائع ہونے والے ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ افغانستان کا معاشی مستقبل بنیادی طور پر چین کے ہاتھوں میں ہے کیونکہ اس نے جنگ زدہ ملک کی تعمیر نو میں مدد کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ 

ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ چین ہمارا سب سے اہم شراکت دار ہے اور ہمارے لیے ایک بنیادی اور غیر معمولی موقع کی نمائندگی کرتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔