پاکستان کے آئی ایم ایف سے کامیاب مذاکرات ، سبسڈی ختم کرنے پر اتفاق

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے اتوار کو کہا ہے کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے اپنے توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) پروگرام کو جاری رکھنے کے لیے مئی 2022 کے وسط میں اپنا مشن پاکستان بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔

 انہوں نے واشنگٹن میں ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ فنڈ نے اس پروگرام کو ایک سال تک بڑھانے پر اتفاق کیا ہے۔ 

وزارت خزانہ کے ایک سینئر اہلکار نے اسلام آباد میں نجی نیوز کو بتایا کہ فنڈ اپنے $6 بلین ڈالر پروگرام کو 8 بلین ڈالر تک لے جائے گا۔ دریں اثنا، پاکستان کے لیے آئی ایم ایف کے مشن کے سربراہ ناتھن پورٹر نے اتوار کی رات دیر گئے جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ ہم نے اتفاق کیا کہ غیر فنڈ شدہ سبسڈیز کو واپس لیا جائے گا۔

 وفاقی وزیر برائے خزانہ و محصولات مفتاح اسماعیل نے واشنگٹن میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایم ایف نے توسیعی فنڈ سہولت پروگرام کو جاری رکھنے کے لیے مئی 2022 کے وسط میں اپنا مشن پاکستان بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔ 

 وزیر خزانہ نے کہا کہ ان کی اور ان کی ٹیم نے فنڈ، ورلڈ بینک اور آئی ایف سی کے ساتھ بہت اچھی بات چیت کی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ جب آئی ایم ایف مشن پاکستان آئے گا تو حکومت اس کے ساتھ عملے کی سطح کے معاہدے کو تیز کرنے کی کوشش کرے گی۔ جب کوئی معاہدہ ہو جاتا ہے، تو ہم ای ایف ایف کے تحت ایک اور قسط حاصل کرنے کے منتظر ہوں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ فنڈ سے بھی درخواست کی گئی تھی جس پر اس نے اتفاق کیا کہ اس پروگرام کو مزید ایک سال کے لیے بڑھایا جائے۔ تاہم، انہوں نے مزید کہا کہ جب فنڈ مشن پاکستان پہنچے گا تو ان تفصیلات کو ترتیب دیا جائے گا۔ 

 انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف سے بھی درخواست کی گئی ہے کہ وہ پاکستان کو دستیاب فنڈنگ ​​کو 6 ارب ڈالر سے بڑھائے

یہ بھی پڑھیں | نوجوانوں کے لئے پانچ سب سے زیادہ تنخواہ والی نوکریاں کون سی ہیں؟ جانئے  

 انہوں نے کہا کہ ترقیاتی اخراجات میں کمی سے جاری منصوبوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور کہا کہ گزشتہ حکومت نے اس پروگرام کے لیے 900 ارب روپے مختص کیے تھے جسے پھر 700 ارب روپے کر دیا گیا جبکہ اب تک صرف 450 ارب روپے استعمال ہوئے ہیں۔ 

 مفتاح اسماعیل نے کہا کہ موجودہ حکومت سابقہ ​​حکومتوں کی طرف سے کئے گئے تمام خودمختار وعدوں کو پورا کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ وعدے عمران خان نے انفرادی طور پر نہیں بلکہ حکومت پاکستان نے کیے ہیں۔ ہم آئی ایم ایف کے ساتھ کیے گئے وعدوں، پچھلی حکومت کے لیے گئے قرضوں اور چین پاکستان اقتصادی راہداری کے وعدوں کے ذمہ دار ہیں۔ انہوں نے عزم کیا کہ ہم عہد سے پیچھے نہیں ہٹ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان گزشتہ 70 سالوں میں کبھی ڈیفالٹ نہیں ہوا اور آئندہ بھی نادہندہ نہیں ہوگا۔ تاہم انہوں نے مزید کہا کہ بجٹ میں بہت زیادہ خسارہ تھا جس کی وجہ سے قرضوں میں اضافہ ہوا۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت مجموعی جی ڈی پی کو بڑھا کر قرضوں کو کم کرنے کی پوری کوشش کرے گی۔

 انہوں نے مزید کہا کہ اگر قومی آمدنی میں اضافہ ہوتا ہے اور قرضوں میں اس رفتار سے اضافہ نہیں ہوتا ہے تو اس سے قرضوں کا بوجھ ضرور کم ہوگا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان پٹرولیم مصنوعات پر سبسڈی کا متحمل نہیں ہو سکتا کیونکہ یہ سب لوگوں کو دی جاتی ہے چاہے ان کی آمدنی کچھ بھی ہو۔ دوسری بات یہ کہ قومی خزانہ اس سبسڈی کو جاری رکھنے کی اجازت نہیں دیتا۔

 بجٹ سے متعلق ایک اور سوال کے جواب میں وزیر نے یقین دلایا کہ جب موجودہ حکومت عہدہ چھوڑے گی تو وہ 10.8 بلین ڈالر کی موجودہ سطح پر ریزرو چھوڑے گی اور یقینی طور پر افراط زر میں کمی آئے گی۔  انہوں نے کہا کہ اتحادی حکومت کو عوام کی حمایت حاصل ہے اور اسے پارلیمنٹ میں اکثریت حاصل ہے۔ 

نجی نیوز کو معلوم ہوا ہے کہ آئی ایم ایف نے جاری توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) پروگرام میں ایک سال کی توسیع کے لیے اسلام آباد کی درخواست پر اتفاق کیا ہے اور وہ پاکستان کو 3 سے 4 بلین ڈالر اضافی فراہم کر سکتا ہے جس کا تعین پاکستان کے لیے دستیاب کوٹے کو مدنظر رکھتے ہوئے کیا جائے گا۔ 

آئی ایم ایف نے یہ فیصلہ اس وقت کیا ہے جب پاکستان نے اس سے باضابطہ درخواست کی تھی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔