پاکستان کسی بلاک کا حصہ نہیں بنے گا، وزیر اعظم عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان کسی بلاک کا حصہ نہیں بننا چاہتا بلکہ عوام کو غربت سے نکالنے کے لیے تمام ممالک کے ساتھ تجارتی تعلقات کا خواہاں ہے۔ 

ماسکو کے دورے کے موقع پر ایک روسی ٹیلی ویژن کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ پاکستان کو ماضی میں اس بلاک کی سیاست کی وجہ سے نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آخری چیز جو ہم چاہتے ہیں وہ دنیا کو بلاکس کی تقسیم سے نکالنا ہے۔ 

 وزیراعظم نے کہا کہ امریکہ، چین اور روس کے درمیان زیادہ تعاون سے انسان کو تنازعات سے کہیں زیادہ فائدہ ہوگا۔ 

 انہوں نے یوکرین کے مسئلے کے پرامن حل کی امید ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ فوجی تنازعات سے مسائل حل نہیں ہوتے۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان نئی ٹیکنالوجی کو اپنا کر ایک بلین ڈالر بچا سکتا ہے  

 وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان روس کے ساتھ دوطرفہ تعلقات کو مضبوط بنانا چاہتا ہے اور وہ اپنے دورہ ماسکو کے منتظر ہیں۔ 

انہوں نے نشاندہی کی کہ پاکستان گیس کی کمی کا شکار ملک ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری نارتھ ساؤتھ گیس پائپ لائن میں تاخیر ہوئی ہے کیونکہ اس روسی کمپنی پر امریکی پابندیوں کی وجہ سے ہم پائپ لائن کی تعمیر کے لیے بات چیت کر رہے تھے۔ 

 انہوں نے کہا کہ ایران پر سے پابندیاں اٹھانے سے پاکستان کو پڑوسی ملک سے سستی گیس حاصل کرنے میں بھی مدد ملے گی۔

 ہندوستان کے ساتھ تعلقات کے بارے میں پوچھے جانے پر، وزیر اعظم نے کہا کہ ان کی حکومت نے اقتدار میں آنے کے بعد کشمیر کے بقایا تنازعہ کو حل کرنے کے لیے فوری طور پر ہندوستان سے رابطہ کیا۔ تاہم انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ ہندوستان پر نازیوں سے متاثر نسل پرستانہ نظریے پر قبضہ کر لیا گیا ہے۔

 ایک سوال کے جواب میں وزیر اعظم نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلی اور غریب ممالک سے ترقی یافتہ دنیا کو پیسے کا غیر قانونی بہاؤ دنیا کو درپیش دو بڑے چیلنجز ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مغربی ممالک کو دہشت گردی کی مالی معاونت کے خلاف ایسے قوانین وضع کرنے چاہئیں جو ان کے پاس ہیں تاکہ غیر قانونی بہاؤ کو روکا جا سکے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔