مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    پاکستان کا ہندوستان کی طرف سے افغانستان میں شمولیت پر اعتراض

    پاکستانی عہدیداروں نے اقوام متحدہ کے زیر اہتمام علاقائی ممالک کے اجلاس میں ہندوستان کو مدعو کرنے کی امریکی تجویز پر تشویش کا اظہار کیا ہے جس کا مقصد افغان جنگ پر ایک “متفقہ نقطہ نظر” اپنانا ہے۔

     اسلام آباد نے بایڈن انتظامیہ کی اس چار نکاتی حکمت عملی پر ابھی تک باضابطہ طور پر جواب نہیں دیا ہے جس میں اقوام متحدہ سے پاکستان ، روس ، امریکہ ، ایران ، چین اور ہندوستان کے وزرائے خارجہ کا اجلاس بلانے کی درخواست بھی شامل ہے۔ 

    لیکن سرکاری ذرائع نے نجی نیوز کو اس بات کی تصدیق کی ہے کہ اس عمل میں بھارت کو شامل کرنے پر پاکستان کو تحفظات ہیں۔ پاکستان کی مخالفت اس حقیقت سے ہے کہ صرف وہی ممالک جو افغانستان کے ساتھ سرحدیں رکھتے ہیں اس عمل کا حصہ ہونا چاہئے۔ 

    ایک سینئر عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست کرتے ہوئے کہا کہ چونکہ ہندوستان افغانستان کے ساتھ کوئی سرحد مشترک نہیں ہے ، لہذا ، اسے اس عمل کا حصہ نہیں بننا چاہئے۔ 

    یہ بھی پڑھیں | گورنمنٹ سینیٹرز سے پی ڈی ایم اپنے مفادات کی خاطر رابطہ کر رہی ہے، عمران خان

    دوسری وجہ یہ ہے کہ پاکستان نے افغان جنگ کے خاتمے کے لئے حالیہ امریکی سفارتی اقدام میں ہندوستان کی شمولیت پر شکوہ کیا ہے ، وہ یہ ہے کہ بھارت ایک ” فسادی ” ہے اور اس نے پاکستان کی سلامتی کو نقصان پہنچانے کے لئے افغان سرزمین کو استعمال کیا ہے۔ 

    وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے قومی سلامتی ڈاکٹر معید یوسف نے جب کسی ٹی وی پروگرام میں اس ترقی پر تبصرہ کرنے کو کہا تو انہوں نے بھی ایسے ہی خیالات کا اظہار کیا۔  انہوں نے  کہا کہ ہمارے پاس اس بات کا ثبوت موجود ہے کہ بھارت افغان سرزمین کو استعمال کرتے ہوئے پاکستان کے خلاف کیا کرتا رہا ہے۔ ہندوستان کو افغانستان میں امن سے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ اگر افغانستان میں امن ہو گا تو صورتحال بدل جائے گی اور وہاں افغانستان قدرتی طور پر ہندوستان کا اثر و رسوخ کم ہوجائے گا۔

     ڈاکٹر یوسف نے مزید کہا کہ اس مرحلے میں یہ “

    محض تجاویز تھیں اور پاکستان کو موقع ملے گا کہ جب ان تجاویز کے عملی شکل پائے گی۔ اگرچہ بھارت نے افغانستان میں بڑے پیمانے پر معاشی سرمایہ کاری کی ہے ، لیکن امریکہ کی کوششوں کے باوجود ابھی تک افغان طالبان سے براہ راست بات کرنے پر اتفاق نہیں ہوا ہے۔ 

     انہوں نے کہا کہ ہمارے لئے کلید یہ ہے کہ افغانستان میں امن ہونا چاہئے اور امن اسی وقت واپس آسکتا ہے جب بھارت پر کسی طرح کا دباؤ ہو۔ میں دیکھ رہا ہوں کہ یہ پاکستان کے لئے ایک اچھا اقدام ہے۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x