مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

پاکستان کا سعودی عرب، امارات اور اجمان کے ساتھ تجارتی معاہدہ

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق داؤد نے اتوار کو کہا ہے کہ خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کے ساتھ مذاکرات تعطل کا شکار ہیں۔

 جی سی سی ، جس میں ان تین ممالک کے علاوہ قطر ، کویت اور بحرین شامل ہیں ، نے 2004 میں پاکستان کے ساتھ آزاد تجارتی مذاکرات شروع کئے تھے۔ جبکہ اس نے 2015 کے بعد سے آزاد تجارتی معاہدے پر عمل درآمد نہیں کیا ہے۔ 

عبدالرزاق داؤد نے نجی نیوز کو بتایا کہ پاکستان کو امید ہے کہ تین خلیجی عرب ریاستوں کے ساتھ ترجیحی تجارتی معاہدوں کے لیے دو طرفہ مذاکرات اگلے 6-12 ماہ میں شروع ہوں گے۔ 

انہوں نے دبئی میں کہا کہ ہمیں لگتا ہے کہ اس وقت جی سی سی کے ساتھ ایک گروپ کی حیثیت سے انفرادی معاہدہ کرنا بہتر ہے۔ ترجیحی تجارتی معاہدہ عام طور پر بعض مصنوعات کو ترجیحی رسائی دیتا ہے جس میں ٹیرف کو کم یا ختم کر دیا جاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | برطانوی وزیر اعظم کی عمران خان کے دس ارب درخت پراجیکٹ کی تعریف

یہ بھی پڑھیں | اقوام متحدہ خطاب: وزیر اعظم عمران خان کے ایسے الفاظ جو مودی اور بائیڈن کو سوچنے پر مجبور کر دیں

 انہوں نے کہا کہ یہ مذاکرات محدود تعداد کے سامان پر مشتمل ہوں گے اور آزاد تجارتی معاہدے کی طرح جامع نہیں ہوں گے ، حالانکہ وقت گزرنے کے ساتھ اگر معاہدوں کو محفوظ بنایا گیا تو اسے بڑھایا جا سکتا ہے۔

 تاہم انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ پاکستان کون سا سامان شامل کرنا چاہے گا۔ 

یاد رہے کہ متحدہ عرب امارات نے رواں ماہ اعلان کیا تھا کہ وہ آٹھ ممالک بشمول ہندوستان ، برطانیہ اور ترکی کے ساتھ تجارت اور سرمایہ کاری کے وسیع معاشی معاہدوں کی کی طرف جائے گا لیکن پاکستان اس میں شامل نہیں ہو گا۔

 وزیر اعظم کے مشیر کے تبصرے پر سعودی ، اماراتی اور عمانی حکام سے فوری طور پر رابطہ نہیں ہو سکا ہے۔ 

عبد الرزاق داؤد دبئی میں ہیں تاکہ اگلے ماہ سے وہاں ہونے والے چھ ماہ کے ایکسپو عالمی میلے میں پاکستان کی شرکت کی تیاریوں کا جائزہ لیں۔

 انہوں نے کہا کہ پاکستان ایکسپو میں حفاظت اور تنوع کو اجاگر کرے گا جس کی انہیں امید ہے کہ یہ سیاحوں میں اضافہ اور جنوبی ایشیائی  ممالک میں سرمایہ کاری کا باعث بنے گا۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔