پاکستان کا ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کا امکان

منگل کو ایک میڈیا رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان نے عالمی منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی معاونت کے نگران ادارے ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے بڑے پیمانے پر سفارتی کوشش شروع کی ہے۔ 

 پاکستان جون 2018 سے پیرس میں قائم فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کی گرے لسٹ میں ہے کیونکہ منی لانڈرنگ، دہشت گردی کی مالی معاونت کی روک تھام میں ناکامی پر پاکستان کو اکتوبر 2019 تک مکمل کرنے کے لیے ایکشن پلان دیا گیا تھا۔ 

تب سے، ملک ایف اے ٹی ایف مینڈیٹ کی تعمیل کرنے میں ناکامی کی وجہ سے مسلسل گرے لسٹ میں شامل ہے۔ 

پاکستان کو فہرست سے نکلنے کے لیے ترکی، چین اور ملائیشیا کے ووٹ درکار ہیں

   رپورٹ کے مطابق، پاکستان کو فہرست سے نکلنے کے لیے ترکی، چین اور ملائیشیا کے ووٹ درکار ہیں اور تینوں ممالک نے پاکستانی حکام کو اس مقصد کے لیے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔ 

  سرکاری ذرائع کے مطابق لسٹ میں پاکستان کی حیثیت کے بارے میں فیصلہ 14 سے 17 جون تک جرمنی کے شہر برلن میں ہونے والے موجودہ اجلاس میں کیا جائے گا۔ 

 ذرائع کے مطابق وزیراعظم شہباز شریف، وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری اور وزیر مملکت برائے خارجہ امور حنا ربانی کھر کے مختلف ممالک کے حالیہ دوروں کے دوران ایف اے ٹی ایف کے حوالے سے اہم بات چیت ہوئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | توہین رسالت: بھارت نے احتجاج کرنے والوں کے گھر مسمار کر دئیے

یہ بھی پڑھیں | بھارت میں گستاخانہ بیانات: پاکستان کی اقوام متحدہ سے خاموش نا رہنے کی اپیل

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ پاکستان نے ایف اے ٹی ایف ایکشن پلان کے تقریباً تمام نکات پر عمل درآمد کیا ہے، سوائے جرمانے کے، اور پاکستان نے قانونی چارہ جوئی اور تمام متعلقہ قانونی ترامیم کی ہیں۔

 برلن میں ایف اے ٹی ایف کا اجلاس 17 جون تک جاری رہے گا اور اجلاس کے آخری دن فورم مختلف ممالک کو بلیک اور گرے لسٹ میں رکھنے یا نہ رکھنے کا فیصلہ کرے گا۔

 پاکستان کے گرے لسٹ میں جاری رہنے سے اسلام آباد کے لیے آئی ایم ایف، ورلڈ بینک، ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) اور یورپی یونین سے مالی امداد حاصل کرنا مشکل ہوتا جا رہا ہے اور اس طرح ملک کے لیے مسائل میں مزید اضافہ ہو رہا ہے۔ 

پاکستان نے اب تک چین، ترکی اور ملائیشیا جیسے قریبی اتحادیوں کی مدد سے بلیک لسٹ میں شامل ہونے سے گریز کیا ہے۔

 ایف اے ٹی ایف ایک بین الحکومتی ادارہ ہے جو 1989 میں منی لانڈرنگ، دہشت گردوں کی مالی معاونت اور بین الاقوامی مالیاتی نظام کی سالمیت کو درپیش دیگر متعلقہ خطرات سے نمٹنے کے لیے قائم کیا گیا تھا۔

 ایف اے ٹی ایف کے اس وقت 39 ارکان ہیں جن میں دو علاقائی تنظیمیں شامل ہیں، یورپی کمیشن اور خلیج تعاون کونسل۔ ہندوستان ایف اے ٹی ایف مشاورت اور اس کے ایشیا پیسفک گروپ کا رکن ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں