پاکستان کا انڈیا کے پلان کے خلاف جی20 سے رابطہ کرنے کا فیصلہ

 پاکستان نے جی20 ممالک سے رابطہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کا مقصد بھارت کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں گروپ بندی کی کسی بھی تقریب یا میٹنگ کے انعقاد سے روکنا ہے۔

 بھارت اگلے سال جی 20 کے اجلاس کی میزبانی کرنے کا منصوبہ بنا رہا ہے جس کے مطابق مقبوضہ علاقے میں جی20 کے بعض پروگراموں کی میزبانی کرے گا۔ 

 ہندوستان اس سال دسمبر میں جی20 کی صدارت سنبھالنے والا ہے۔ 

 ہندوستان جی20 گروپ کا حصہ ہے جس میں ارجنٹائن، آسٹریلیا، برازیل، کینیڈا، چین، جرمنی، فرانس، ہندوستان، انڈونیشیا، اٹلی، جاپان، میکسیکو، روس، سعودی عرب، جنوبی افریقہ، جنوبی کوریا، برطانیہ ، امریکہ، ترکی سمیت دنیا کی بڑی معیشتیں شامل ہیں۔ 

 جب کہ پاکستان پہلے ہی ہندوستانی اقدام کو مسترد کر چکا ہے۔ سرکاری ذرائع نے اتوار کو ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ اسلام آباد اس معاملے پر جی 20 ممالک سے رابطہ کرے گا۔ 

ذرائع نے بتایا کہ پاکستان خاص طور پر چین، ترکی اور سعودی عرب جیسے ممالک سے اپنے تحفظات سے آگاہ کرے گا۔ 

اسلام آباد بھارتی منصوبوں کا مقابلہ کرنے کے لیے امریکا، برطانیہ اور جی ٹوئنٹی کے دیگر اراکین سے بھی بات کرے گا۔ ذرائع نے بتایا کہ بھارت متنازعہ علاقے میں اس طرح کے پروگراموں کی میزبانی کے ذریعے متنازعہ علاقے میں حالات کو معمول پر لانے کی کوشش کر رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | چائے کی بجائے لسی اور ستو کو پروموٹ کریں، ایچ ای سی کی وائس چانسلرز کو ہدایت

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف کا بڑی صنعتوں پر دس فیصد سپر ٹیکس لگانے کا اعلان 

 ذرائع کے مطابق، زمینی صورتحال، تاہم، بھارتی دعووں کے بالکل برعکس ہے کیونکہ متنازعہ علاقے میں حکام انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث ہیں۔

 اسلام آباد میں حکومت کی تبدیلی کے بعد سے کشیدگی میں کمی کی کچھ امیدیں تھیں۔ لیکن ذرائع کے مطابق بھارت کی ایسی حرکتیں ان کوششوں کو نقصان پہنچا سکتی ہیں۔ 

 ہندوستانی قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول نے بھی کسی بھی دوبارہ مذاکرات کی امیدوں کو ختم کردیا کیونکہ انہوں نے اصرار کیا ہے کہ نئی دہلی اپنی شرائط پر پاکستان سے بات کرے گا۔

 اگر بھارت کامیاب ہو جاتا ہے تو متنازعہ علاقے میں یہ پہلا بین الاقوامی ایونٹ ہو گا جب سے نئی دہلی نے 5 اگست 2019 کو متنازعہ علاقے کی خصوصی حیثیت کو یکطرفہ طور پر منسوخ کر دیا تھا۔ بھارتی اقدام سے پاکستان کے ساتھ تناؤ مزید گہرا ہو گیا ہے، جس نے ان تبدیلیوں کو سختی سے مسترد کرتے ہوئے اسے مسترد کر دیا ہے۔

 جوہری ہتھیاروں سے لیس دونوں پڑوسیوں کے درمیان بین الاقوامی قوانین کے ساتھ ساتھ دو طرفہ مفاہمت کی بھی خلاف ورزی ہے۔ 

 حالیہ مہینوں میں، ہندوستانی حکومت نے خلیجی ممالک سے سرمایہ کاری کانفرنس کا انعقاد کرکے شورش زدہ خطے میں حالات معمول پر لانے کی کوشش کی ہے اور اب وہ ایک قدم آگے بڑھ کر جی20 سربراہی اجلاس کی میزبانی کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں