پاکستان نے افغان طالبان کو “ٹی ٹی پی” کو ایک ٹیسٹ کیس کے طورپر لینے کا کہہ دیا

پاکستان کا خیال تھا کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) افغان طالبان کے لیے ایک “آزمائشی کیس” ہے، کیونکہ اس گروپ سے نمٹنے سے عبوری حکومت کو دوسرے دہشت گردوں سے نمٹنے کے حوالے سے دنیا کی نظروں میں اپنی ساکھ قائم کرنے میں مدد ملے گی۔ 

اس پیشرفت سے واقف اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست کرتے ہوئے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا ہے کہ ایک سینئر اہلکار نے کہا ہے کہ ہم طالبان قیادت سے کہہ رہے ہیں کہ ٹی ٹی پی کو ایک ٹیسٹ کیس کے طور پر سمجھیں۔

 اہلکار نے مزید کہا کہ اگر طالبان پاکستان کے خدشات کو دور نہیں کر سکتے تو کون ان پر اور ان کے القاعدہ اور اس طرح کے دیگر گروپوں سے تعلقات ختم کرنے کے وعدے پر بھروسہ کرے گا۔

یہ بھی پڑھیں | حکومت کی نواز شریف کی میڈیکل رپورٹ کو “مشکوک” قرار دینے کی کوشش

 پاکستان اور طالبان کی عبوری حکومت کے درمیان گہرے تعلقات ہیں اور پاکستان ایک ایسا ملک ہے جس سے توقع کی جاتی ہے کہ افغان طالبان کی قیادت اپنے خدشات کو دور کرے گی۔ 

 اہلکار نے وضاحت کی کہ اگر وہ پاکستان کے تحفظات کو مدنظر نہیں رکھتے تو یہ افغان طالبان کے لیے نقصان دہ ہو گا۔ ایک عالمی برادری، خاص طور پر مغرب پوچھے گا کہ وہ پاکستان کو بھی مطمئن نہیں کر سکتے تو وہ دوسرے ممالک کے دہشت گردی کے خدشات کو کیسے دور کریں گے؟

  یہ پیشرفت اس وقت ہوئی جب عبوری افغان طالبان حکومت ٹی ٹی پی کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے جدوجہد کر رہی تھی۔

 پاکستان نہ صرف افغانستان کے لیے انسانی امداد کا خواہاں ہے بلکہ عالمی برادری پر زور دے رہا ہے کہ وہ افغانستان کو تنہا نا چھوڑے۔ 

اس نے حال ہی میں طالبان حکومت کے لیے بین الاقوامی حمایت حاصل کرنے کے لیے تنظیم اسلامی تعاون (او آئی سی) کے وزرائے خارجہ کے ایک غیر معمولی اجلاس کی میزبانی بھی کی ہے۔

 بدلے میں، پاکستان توقع کرتا ہے کہ طالبان حکومت خاص طور پر کالعدم ٹی ٹی پی کے حوالے سے اس کے تحفظات دور کرے گی۔ 

 اگست میں گروپ کے دوبارہ اقتدار میں آنے کے بعد پاکستان نے افغان طالبان کی قیادت سے رابطہ کیا تھا جس میں ٹی ٹی پی کے خلاف کارروائی بھی شامل تھی۔ طالبان کی عبوری حکومت کو ٹی ٹی پی کے انتہائی مطلوب دہشت گردوں کی فہرست بھی فراہم کی گئی تھی۔  لیکن افغان طالبان نے ٹی ٹی پی کے ساتھ امن معاہدہ کرنے کے لیے اپنے اچھے دفاتر کی پیشکش کی۔ پاکستان نے اس پیشکش کو قبول کر لیا اور دونوں فریقین کے درمیان کچھ آمنے سامنے ملاقاتوں کے بعد نومبر میں جنگ بندی کا معاہدہ طے پا گیا۔ 

 گزشتہ ہفتے ایک نیوز کانفرنس میں ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) میجر جنرل بابر افتخار نے پہلی بار عوامی طور پر انکشاف کیا کہ پاکستان نے ٹی ٹی پی کے ساتھ جنگ ​​بندی کیوں کی۔ 

 چیف فوجی ترجمان کے مطابق، طالبان کی عبوری حکومت نے اعتماد سازی کے اقدام کے طور پر ٹی ٹی پی کے ساتھ جنگ ​​بندی کی سہولت فراہم کی۔ تاہم ایک ماہ تک جاری رہنے والی جنگ بندی 9 دسمبر کو بغیر کسی پیش رفت کے ختم ہو گئی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں