پاکستان: سیلاب سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد پندرہ سو گئی

سیلاب سے جاں بحق ہونے والوں کی تعداد

 ‏ پاکستان کے تباہ کن سیلاب، جس نے جنوبی ایشیائی قوم کے بہت بڑے حصے کو غرق کر دیا ہے، سے تقریباً 1,500 افراد جاں بحق ہو گئے ہیں۔

 جمعرات کو اعداد و شمار کے مطابق، حکام نے تباہی سے متاثر ہونے والے لاکھوں افراد کے لیے امدادی سرگرمیاں تیز کر دی ہیں۔

بارشوں سے 30 بلین ڈالر کا نقصان

مون سون کی ریکارڈ بارشوں اور شمالی پہاڑوں میں برفانی پگھلنے سے آنے والے سیلاب نے 220 ملین کی آبادی میں سے 33 ملین کو متاثر کیا ہے جس سے گھروں، ٹرانسپورٹ، فصلوں اور مویشیوں کو 30 بلین ڈالر کا نقصان پہنچا ہے۔

  نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی نے کہا کہ مرنے والوں کی تعداد 1,486 ہے جن میں سے تقریباً 530 بچے ہیں جبکہ اس عرصے میں 90 مزید افراد کی موت ہوئی۔

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف ازبکستان پہنچ گئے 

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف کل دو روزہ دورے پر ازبکستان جائیں گے 

 گزشتہ چند ہفتوں کے دوران، حکام نے سیلابی پانی کو کلیدی ڈھانچوں جیسے پاور اسٹیشنوں اور گھروں سے باہر رکھنے کے لیے رکاوٹیں کھڑی کی ہیں جب کہ کسان جو اپنے مویشیوں کو بچانے کی کوشش میں رہے اور چارہ ختم ہونے لگا تو انہیں ایک نئے خطرے کا سامنا کرنا پڑا۔ 

سیلاب: موسمیاتی تبدیلیوں کا نتیجہ

 حکومت اور اقوام متحدہ نے موسم گرما کے ریکارڈ توڑنے والے درجہ حرارت کے تناظر میں بڑھتے ہوئے پانی کے لیے موسمیاتی تبدیلیوں کو مورد الزام ٹھہرایا ہے جس نے ہزاروں لوگوں کو اپنے گھروں سے خیموں میں یا شاہراہوں کے ساتھ کھلے میں رہنے پر مجبور کر دیا ہے۔ 

 پاکستان میں جولائی اور اگست میں 391 ملی میٹر (15.4 انچ) بارش ہوئی یا 30 سالہ اوسط سے تقریباً 190 فیصد زیادہ۔ یہ تعداد سب سے زیادہ متاثرہ علاقوں میں سے ایک، جنوبی صوبہ سندھ کے لیے 466 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔

 وزارت خارجہ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات اور امریکہ سے امدادی پروازیں جمعرات کو ملک میں پہنچی ہیں۔ اقوام متحدہ تعمیر نو کی ضروریات کا جائزہ لے رہی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔