پاکستان آئی ایم ایف سے 6 دن کے اندر امداد وصول کرے گا

انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ سے 1.17 بلین ڈالر کی قسط مل جائے گی

 سٹیٹ بینک آف پاکستان کے قائم مقام گورنر مرتضیٰ سید نے بتایا ہےکہ پاکستان کو 29 اگست کو ہونے والے ایگزیکٹو بورڈ کی منظوری کے بعد چھ دن کے اندر انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ سے 1.17 بلین ڈالر کی قسط مل جائے گی۔ 

مرتضیٰ سید نے کہا کہ ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر رواں مالی سال کے اختتام تک 16 ارب ڈالر تک پہنچ جائیں گے جو معاشی کرنسی کے بگڑتے بحران کے باعث کم ہو کر 8 ارب ڈالر رہ گئے ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ پاکستان کے 38 بلین ڈالر کے وعدے ہیں اس لیے ہم فنانس سے زیادہ ہیں۔ 

 مرکزی بینک کے سربراہ نے کہا کہ دو طرفہ مدد کی منظوری جلد ہی 4 ارب ڈالر تک پہنچ جائے گی جبکہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ جی ڈی پی کا 3 فیصد رہنے کی توقع ہے۔

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف نے ٹریڈرز کے لئے فکس ٹیکس ختم کر دیا

یہ بھی پڑھیں | سندھ میں سکول کالجز جمعرات تک بند رہیں گے

 پاکستان نے آئی ایم ایف کے مطالبے پر مالیاتی فرق کو پورا کرنے کے لیے چین، سعودی عرب، قطر اور یو اے ای سے رابطہ کیا ہے۔ 

 دوست ممالک کی جانب سے 4 بلین ڈالر کے وعدے کے ٹوٹنے میں قطر سے 2 بلین ڈالر، سعودی عرب سے 1 بلین ڈالر (موخر تیل کی سہولت) اور متحدہ عرب امارات سے 1 بلین ڈالر (سرمایہ کاری) شامل ہیں۔ یہ رقوم اگلے بارہ مہینوں میں موصول ہونے کی امید ہے۔ 

اسلام آباد نے جولائی میں واشنگٹن میں مقیم قرض دہندہ کے ساتھ عملے کی سطح پر معاہدہ کیا تھا لیکن پاکستان کی جانب سے اس عمل کو تیز کرنے کی اپیل کے باوجود بورڈ کا اجلاس نہیں ہو سکا۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف معاہدے میں تاخیر اور بیرونی بہاؤ خشک ہونے سے زرمبادلہ کے نصف ذخائر فروری میں 16 بلین ڈالر سے 8 ارب ڈالر ہو گئے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔