پاکستان‌ ‌میں‌ ‌تین‌ ‌ہفتہ‌ ‌تک‌ ‌اومیکرون‌ ‌پھیلنے‌ ‌کا‌ ‌خدشہ‌ ‌

وزیر اعظم کے سابق معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا نے خبردار کیا ہے کہ آئندہ تین ہفتوں میں ملک میں کوویڈ 19 کے اومیکرون قسم کے کیسز بڑھ سکتے ہیں۔ 

انہوں نے یہ انتباہ اس وقت جاری کیا ہے جب بلوچستان میں اومیکرون کے 32 مشتبہ کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔ 

 نجی ٹی وی کے مدثر نذیر سے بات کرتے ہوئے ڈاکٹر مرزا نے کہا کہ اومیکرون کوویڈ19 کی دیگر اقسام کے مقابلے میں تیزی سے پھیلتا ہے، لیکن اس بات کا کوئی اشارہ نہیں ملا کہ یہ زیادہ شدید انفیکشن کا باعث بنتا ہے۔ 

تاہم، ایک خطرے کی بات کہ ہے کہ چونکہ اومیکرون وائرس کے تیزی سے پھیلاؤ کا باعث بن سکتا ہے، اس لیے میرا خیال ہے کہ اگلے دو یا تین ہفتوں میں پاکستان میں  کوویڈ19 کیسز کی تعداد میں اضافہ دیکھا جا سکتا ہے۔ 

 حکومت مقدمات پر قابو پانے کے لیے کیا کر سکتی ہے؟ ڈاکٹر مرزا نے کہا کہ حکومت کو کچھ فیصلے کرنے ہوں گے جن میں لاک ڈاؤن یا سمارٹ لاک ڈاؤن یا کچھ سیکٹرز کو بند کرنا شامل ہو سکتا ہے۔ 

دریں اثنا، بلوچستان میں صحت حکام نے کوویڈ19 کی نئی قسم اومیکرون کے کم از کم 32 مشتبہ کیسز کی اطلاع دی ہے۔ تاہم، نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کی جانب سے ابھی تک ان کیسز کی تصدیق نہیں کی گئی ہے۔ 

 محکمہ صحت بلوچستان کے حکام کا کہنا ہے کہ نمونے تصدیق کے لیے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ (این آئی ایچ) اسلام آباد بھیجے گئے ہیں۔ 

 کوویڈ19 آپریشن سیل کے انچارج ڈاکٹر نقیب اللہ نیازی کا کہنا ہے کہ اومیکرون کے تمام مشتبہ کیسز ضلع قلات سے رپورٹ ہوئے ہیں۔ 

ان کا کہنا ہے کہ مریضوں نے کوویڈ19 کے لیے مثبت تجربہ کیا ہے اور علامات بتاتی ہیں کہ وہ اومیکرون قسم سے متاثر ہوئے ہیں۔ لیکن یہ تصدیق کرنا باقی ہے کہ یہ اومیکرون ہے نہیں۔ 

 محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ قلات میں مریضوں کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے اور ان کے نمونے تصدیق کے لیے این آئی ایچ اسلام آباد بھیجے گئے ہیں۔ 

انہوں نے بتایا کہ ہم دوسرے لوگوں کو ٹریک کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | زید علی کی “میں ہوں نا” والا سین نئے انداز سے پیش کرنے پر تعریف

 ڈاکٹر اومیکرون انفیکشن کی شناخت کے لیے جینوم کی ترتیب کا استعمال کر رہے ہیں۔ حکام کے مطابق، بلوچستان کے مشتبہ کیسز کی جینوم سیکوینسنگ رپورٹ چند دنوں میں متوقع ہے۔

 حکام کا کہنا ہے کہ قلات میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی شرح میں کئی ماہ کے بعد 5 فیصد سے زیادہ اضافہ ہوا ہے۔ 

 پاکستان نے اس ماہ کے شروع میں اپنے پہلے اومیکرون کیس کی تصدیق کی تھی۔ یہ مریض ایک خاتون تھی جس کا تعلق کراچی سے تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں