پاکستانی سفیر اور بائیڈن کے درمیان پاک-امریکہ تعلقات پر بات چیت

  واشنگٹن میں اسلام آباد کے سفیر مسعود خان نے وائٹ ہاؤس کے دورے پر امریکی صدر جو بائیڈن سے ملاقات کی ہے جہاں دونوں نے پاک-امریکہ تعلقات کو آگے بڑھانے کے لیے  تبادلہ خیال کیا ہے۔

امریکہ میں پاکستانی سفارت خانے کی طرف سے جاری کردہ ایک پریس ریلیز کے مطابق، مسعود خان نے امریکی صدر کے ساتھ ملاقات کی اور مبارکباد دی نیز وائٹ ہاؤس کا دورہ کیا – جو نئے تعینات ہونے والے سفیروں کے لیے ایک قائم شدہ روایت ہے۔ 

 بیان میں کہا گیا ہے کہ تقریب کے دوران، امریکی صدر اور سفیر نے امریکہ اور پاکستان کے تعلقات کو آگے بڑھانے کے لیے ایک مضبوط بنیاد بنانے پر مختصر گفتگو کی۔

 امریکی حکومت ایک روایت کی پیروی کرتی ہے جس کے تحت واشنگٹن میں نئے سفیروں کی تقرری کے بعد وائٹ ہاؤس میں ایک تقریب منعقد کی جاتی ہے جہاں نئے سفیر اپنی تقرری کے مطابق سربراہ مملکت کو اپنی اسناد پیش کرتے ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کا ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلنے کا امکان

یہ بھی پڑھیں | توہین رسالت: بھارت نے احتجاج کرنے والوں کے گھر مسمار کر دئیے

مسعود خان کو 25 مارچ کو اس وقت واشنگٹن بھیجا گیا تھا، جب پی ٹی آئی حکومت ابھی اقتدار میں تھی، لیکن 11 اپریل کو سابق وزیراعظم عمران خان کی برطرفی کے بعد یہ قیاس آرائیاں کی جا رہی تھیں کہ اسلام آباد میں تبدیلی سے سفارتی تقرریوں پر بھی اثر پڑے گا۔ 

 بعد ازاں، اقوام متحدہ میں پاکستان کے مندوب، سفیر منیر اکرم نے وضاحت کی کہ موجودہ سفیر اس وقت تک غیر ملکی دارالحکومتوں میں ملک کی نمائندگی کرتے رہتے ہیں جب تک کہ نئی حکومت کی طرف سے خصوصی طور پر وطن واپس جانے کے لیے نہ کہا جائے۔ 

 اس ہفتے کے شروع میں واشنگٹن پہنچنے پر،مسعود خان کو امریکی محکمہ خارجہ کے چیف آف پروٹوکول کی طرف سے ایک خط موصول ہوا، جس میں ان کی واشنگٹن میں پاکستان کے ‘ورکنگ ایمبیسیڈر’ کے طور پر تقرری کی توثیق کی گئی تھی۔ 

 بعد ازاں 19 اپریل کو انہیں امریکی صدر کے دفتر سے ایک خط بھی موصول ہوا جس میں ان کی تقرری کی باضابطہ تصدیق کی گئی۔ 

 دریں اثنا، آج جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ صدر کے ساتھ سرکاری تصویر کے لیے چھیالیس دیگر سفیر بھی وہاں موجود تھے، جو ایک ایک کرکے کھینچی گئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ بھی کوویڈ 19 کی پابندیوں کی وجہ سے ایک سال سے زیادہ عرصے سے صدر سے ملاقات نہیں کر سکے تھے۔

 چونکہ صدر بائیڈن کی عمر 79 سال ہے، انہیں وائرس کا خاص طور پر خطرہ رہتا ہے، اس لیے وائٹ ہاؤس نے صدر کے دوسروں کے ساتھ رابطے کو کم سے کم کرنے کی کوشش کی۔ واشنگٹن میں سفارتی ذرائع نے اس سے قبل ڈان کو بتایا تھا کہ کوویڈ19 نے اسناد کی تقریب کو بھی متاثر کیا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں