ٹک ٹاک امریکہ چائنہ جنگ کی وجہ بننے لگا

ویڈیو شیئرنگ کی انتہائی کامیاب ایپلی کیشن ٹک ٹاک ایک عالمی طور پر جنگ و جدل کے واقعات میں تبدیل ہو رہی ہے جبکہ اور امریکہ اور چین کے مابین جیو پولیٹیکل جنگ کی وجہ بن کر رہ گئی ہے۔

 امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس ایپ کو قومی سلامتی کا خطرہ قرار دیتے ہوئے دعوی کیا ہے کہ ٹک ٹاک اور اس کے چینی بانیان بائٹ ڈانس صارف کے ڈیٹا تک رسائی حاصل کرسکتے ہیں اور اسے چینی انٹیلی جنس خدمات تک پہنچا سکتے ہیں۔ 

ٹرمپ کے ایگزیکٹو آرڈر کے تحت اتوار کی رات سے ٹک ٹوک کے نئے ڈاؤن لوڈ پر پابندی ہوگی اور اگر اس کی ملکیت کی تنظیم نو کا معاہدہ عمل میں نہ لایا گیا تو 12 نومبر سے استعمال پر پابندی عائد کردی جائے گی۔

ٹک ٹاک کو تقریبا دو ارب لوگ ڈاؤن کر چکے ہیں اور اس کے صارفین کی تعداد لگ بھگ 700 ملین ہے جو اس ایپ کو سوشل میڈیا کی دنیا کا سب سے بڑا کھلاڑی بنا دیتا ہے۔ 

اس میں صرف 15 سے 60 سیکنڈز تک کی ویڈیوز اپلوڈ ہوتی ہیں جو اس کی شہرت کا باعث بنا ہے۔ جبکہ ان ویڈیوز میں متعدد ڈانس ، پیرڈی ، یا خبروں پر تبصرے شامل ہوتے ہیں۔ فلٹرز اور خصوصی ایڈیٹنگ کو بھی شامل کیا جا سکتا ہے۔

کمپنی کے مطابق ، صرف امریکہ میں ٹک ٹاک کے 100 ملین صارفین ہیں جبکہ ہر روز 50 ملین لاگ ان بھی ہوتے ہیں۔

ٹرمپ ٹک ٹاک کو چینی کنٹرول سے دور کرنے کی کوشش کر رہا ہے اور وہ چاہتا ہے امریکی لوگ بھی اس ملکیت میں شامل ہوں تاہم ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ کیا بیجنگ اس معاہدے کو منظور کرے گا یا نہیں۔ 

 ٹرمپ نے کہا ہے کہ وہ ایسے کسی بھی معاہدے کو قبول نہیں کریں گے جس سے چینیوں کو ٹک ٹاک کا کنٹرول دیا جائے۔

دوسری جانب  ٹک ٹاک نے چینی حکومت سے تعلقات کی تردید کی ہے اور دعوی کیا ہے کہ اس کے سرور بیجنگ کے لئے قابل رسائی نہیں ہیں۔ ٹک ٹاک نے اپنے ایک حالیہ بیان میں کہا ہے کہ ہم سنگاپور میں بیک اپ رکھتے ہیں جس میں ریاستہائے متحدہ کے تمام امریکی صارف کا ڈیٹا محفوظ ہے۔ ٹک ٹاک نے واضح کیا کہ اس کے ڈیٹا سینٹرز مکمل طور پر چین سے باہر واقع ہیں۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *