ٹرمپ کرسمس سے پہلے افغانستان سے فوج نکالنے کے خواہشمند ہیں

صدر ڈولنڈ ٹرمپ نے بدھ کے آخر میں ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ تمام امریکی فوجی کرسمس تک افغانستان سے واپس چلے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس کرسمس تک گھر میں خدمت کرنے والے ہمارے بہادر مرد اور خواتین کی تھوڑی بہت تعداد باقی رہ جانی چاہئے۔

تفصیلات کے مطابق  طالبان نے 29 فروری کو امریکہ کے ساتھ اپنے معاہدے پر عمل درآمد کے مثبت قدم کے طور پر اس اعلان کا خیرمقدم کیا ہے جس کے مطابق تمام غیر ملکی افواج مئی 2021 تک افغانستان سے نکل جائیں گی۔ اس کے بدلے میں طالبان نے وعدہ کیا تھا کہ 2001 میں امریکی حملے کی اصل وجہ ، القاعدہ جیسے بین الاقوامی قومی انتہا پسند گروپوں کے ذریعہ افغانستان کو استعمال نہیں ہونے دیں گے۔

 ایک بیان میں طالبان نے کہا کہ وہ معاہدے کے پابند ہیں  اور مستقبل میں امریکہ سمیت تمام ممالک کے ساتھ مثبت تعلقات چاہتے ہیں۔

یاد رہے کہ گزشتہ ماہ افغان حکومت اور طالبان نے دوحہ میں امن مذاکرات کا آغاز کیا جس کے بعد مذاکرات کا عمل آہستہ آہستہ شروع ہوگیا ہے۔ ٹرمپ کا یہ وعدہ امریکی انتخابات سے ایک مہینہ سے بھی کم عرصہ قبل ہوا ہے جس میں ٹرمپ نے یہ ظاہر کرنے کی کوشش کی ہے کہ وہ امریکہ کی کتم نا ہونے والی جنگوں کو بند کرنے کے اپنے وعدے پر عمل پیرا ہیں۔

 امریکی فوجی کارروائیوں کے 19 سال بعد ان کے اس موقف کو ملک میں وسیع پیمانے پر حمایت حاصل ہے جس میں ان کے ڈیموکریٹک حریف جو بائیڈن بھی شامل ہیں ، جنھوں نے نائب صدر کے عہدے کے دوران افغانستان میں امریکی مداخلت کو روکنے کے لئے زور دیا تھا۔ پچھلے مہینے یہ پوچھے جانے پر کہ کیا انہوں نے افغانستان اور عراق دونوں سے فوجیوں کے انخلا کے ٹرمپ کے منصوبوں کی حمایت کی ، بائیڈن نے کہا واضح الفاظ میں کہا کہ ہاں ، میں کرتا ہوں۔ 

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *