مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    وزیر اعظم کا اپوزیشن کو استعفوں کے معاملے پر جواب

    چونکہ اپوزیشن کی حکومت کے 31 جنوری تک اقتدار چھوڑنے کی آخری تاریخ بغیر کسی پروگرام کے گزر گئی ، وزیر اعظم عمران خان نے منگل کے روز یہ کہتے ہوئے اپوزیشن کے اعتروض کا جواب دیا کہ اگر اپوزیشن لیڈر قوم سے لوٹی ہوئی دولت واپس کردیں گے تو وہ مستعفی ہوجائیں گے۔

     یاد رہے کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے حکومت کو 31 جنوری تک استعفی دینے کی ڈیڈ لائن دی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ اگر استعففی نا دیا گیا تو وہ لانگ مارچ کرتے ہوئے حکمران جماعت کو استعفی پر مجبور کریں گے اور اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے بعد حکومت کا اقتدار ختم ہوجائے گا۔ 

    وزیر اعظم نے کابینہ کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ استعفیٰ دینے میں ہمت کی ضرورت ہے۔ انہوں نے قومی مفاہمت آرڈیننس کے تحت مشرف دور کی سیاسی معافی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اگر ان میں استعفیٰ دینے کی ہمت ہوتی تو وہ این آر او حاصل کرکے ملک سے بھاگ نہ جاتے۔ انہوں نے وزراء کو بتایا کہ حزب اختلاف لانگ مارچ نہیں کر سکتی یا لوگوں کو جمع نہیں کر سکتی ہے۔

    دوسری طرف عمران خان نے کہا کہ وہ استعفی دینے کو تیار ہیں اگر [پی ڈی ایم رہنما] نواز شریف ، آصف زرداری اور مولانا فضل الرحمن ملک سے چوری کی گئی رقم واپس کردیں۔

     کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے وفاقی دارالحکومت میں رات گئے ایک حادثے کا نوٹس لیتے ہوئے سیکیورٹی پروٹوکول کے غلط استعمال کو روکنے کے لئے وزرا کو فراہم کردہ سیکیورٹی کی تفصیلات طلب کیں۔ بعد ازاں کابینہ کے اجلاس کے بعد صحافیوں کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ وزیر اعظم نے اس واقعے کا نوٹس لیا جس میں گاڑیوں کے ایک دستے نے اسلام آباد میں ریڈ ٹریفک سگنل توڑ دیا تھا اور چار افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

    یہ بھی پڑھیں | الطاف حسین کورونا کا شکار، آئی سی یو میں داخل

     وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیر اعظم نے وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو ہدایت کی کہ وہ سڑکوں پر سیکیورٹی اور پروٹوکول اسکواڈ کے استعمال کی سختی سے حوصلہ شکنی کریں جس سے خوف اور استثنیٰ کی ثقافت پیدا ہوئی ہے۔ وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ وزیر ریلوے اعظم سواتی ریلوے کی اراضی کے معاملے پر کام کر رہے ہیں اور انھیں مزید ہدایت دی گئی ہے کہ وہ سرکاری اثاثے بازیاب کروائیں۔

     انہوں نے مزید کہا کہ زمینوں پر قبضے نے قانون کی حکمرانی کو کمزور کیا ہے اور عوام میں عدم تحفظ کا احساس پیدا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کے منصوبے کے مطابق مختلف منصوبوں میں ایک لاکھ سے زیادہ رہائشی یونٹ تعمیر ہونے کے ساتھ ہی تعمیراتی سرگرمیاں آگے بڑھ رہی ہیں۔ 

    انہوں نے مزید کہا کہ لوگوں کو کم لاگت والے ہاؤسنگ یونٹوں کے لئے بینکوں سے قرض مل رہا ہے۔ بینک 5 مرلہ مکانات کی تعمیر کے لئے 5 سے 7 فیصد مارک اپ پر قرض دے رہے تھے اور قرض کی حد 35 لاکھ روپے رکھی گئی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسے بینکوں کے قرضوں کے تحفظ کے لئے پارلیمنٹ نے بھی پیش گوئی کا قانون پاس کیا تھا۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x