مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    وزیر اعظم عمران خان نے پاکستان میں غذائی تحفظ کو پاکستان کا سب سے بڑا چیلنج قرار دیا

    وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اگر زرعی نمو کو ایک سطح تک بڑھانے کے لئے سخت اقدامات نہ کیے گئے تو ملک میں زراعت کی مصنوعات کو برآمد کرنے والے ممالک میں فوڈ سکیورٹی قومی سلامتی کا مسئلہ بن جائے گی۔

     پاکستان کے پاس نئے چیلنجز ہیں اور سب سے بڑا چیلنج فوڈ سیکیورٹی ہے۔ 

    تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم نے کسانوں کے کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فوڈ سیکیورٹی دراصل قومی سلامتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی حکومت متعدد بدعات متعارف کراتے ہوئے زراعت کے شعبے میں انقلاب لانے کے لئے پرعزم ہے جو پچھلے 70 سالوں میں نہیں ہو سکی۔

     کاشتکاروں کو پیداوار بڑھانے پر زور دیتے ہوئے ، وزیر اعظم نے کہا کہ زرعی ملک ہونے کے باوجود حکومت نے خوراک اور زرعی اشیاء کی درآمد کے لئے کافی زرمبادلہ خرچ کیا۔

     انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے پچھلے سال چالیس لاکھ ٹن گندم درآمد کی تھی ، جو ڈالر کی قلت کے وقت ملک کے غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر کو جھٹلا رہی تھی۔

    یہ بھی پڑھیں | لاہوری دھماکے کے مقدمات میں پنجاب پولیس کا بندوبست ، شیخ رشید

     انہوں نے کہا کہ آبادی میں تیزی سے اضافے کو مزید تیاریوں کی ضرورت ہے کہ اگلے پانچ سے 15 سالوں میں ملک اپنی تیزی سے بڑھتی آبادی کے لئے فصلیں کیسے تیار کرے گا۔ 

    غذائی تحفظ پاکستان کو درپیش ایک سب سے بڑے چیلنج میں سے ایک ہے اور اس لئے ہمیں مستقبل میں غذائی قلت سے قوم کو بچانے کے لئے اقدامات کرنے چاہیے۔

     انہوں نے کہا کہ ملک میں تقریبا 40 فیصد بچوں کی ٹھیک نشوونما نہیں ہو رہی ہے کیوں کہ انہیں مناسب غذا نہیں ملتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کو اسٹنٹ کرنے کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے پہلی بار احسان کے ذریعہ تغذیہ بخش پروگرام لایا جا رہا ہے۔

      وزیر اعظم نے نشاندہی کی کہ خالص دودھ کی دستیابی بھی بچوں کی نشوونما سے متعلق ایک بڑا مسئلہ ہے۔

     انہوں نے مزید کہا کہ ابتدائی تفتیش میں ہونے والی جعلی دودھ کی پیداوار جیسے آلودگی اور ناقص عمل سے پتہ چلتا ہے۔ مجھے بتایا گیا کہ واشنگ مشین میں دودھ تیار کیا جارہا ہے۔

     انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ بچوں کو اپنی خالص شکل میں ان کی نشوونما کے لئے سب سے بنیادی چیز حاصل نہیں ہو رہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس طرح کے معاملات پر قابو پانے کی پابندی قیمتوں میں اضافے کا باعث بنی ہے اور اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان میں دودھ کی پیداوار دوسرے ممالک سے پیچھے رہ گئی ہے۔

     انہوں نے مزید کہا کہ اس کا آسان حل یہ ہے کہ اچھے معیار کے بیل منی کو درآمد کیا جائے جو مقامی مویشیوں کے جین کو بہتر بناسکے۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x