وزیر اعظم عمران خان رواں ماہ روس کا دورہ کریں گے

وزیر اعظم عمران خان کا مغرب کے حوالے سے مؤقف تیزی سے تبدیل ہوتا جا رہا ہے کیونکہ وہ اپنا “تاریخی دورہ چین” مکمل کرنے اور بیجنگ اولمپکس میں شرکت کے بعد 23 سے 25 فروری تک روس کا دورہ کرنے والے ہیں، جس کا امریکہ اور کئی دیگر مغربی ممالک نے بائیکاٹ کیا تھا۔ 

سفارتی ذرائع نے اتوار کی شام اس بات کی تصدیق کی ہے کہ وزیر اعظم سے فروری کے آخری ہفتے میں ماسکو کا  “اہم” دورہ متوقع ہے جو کہ دو دہائیوں میں کسی پاکستانی وزیر اعظم کا پہلا دورہ ہونا ہے۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے پیش رفت کی تصدیق کرنے سے گریز کرتے ہوئے کہا کہ اس مقصد کے لیے وزارت خارجہ سے رجوع کیا جائے۔ 

خیال کیا جاتا ہے کہ وزیر اعظم کا ماسکو کا دورہ مغرب کے لیے ایک واضح اشارہ ہے۔ خاص طور پر  ایسے موقع پر جب عمران خان نے واضح طور پر امریکہ کو افغانستان سے انخلاء کے بعد پاکستان میں اڈے دینے پر بالکل نہیں” یعنی “ابسلیوٹلی ناٹ” کہا تھا۔ 

 روس اور یوکرین اور بالآخر ماسکو اور مغرب کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کا حوالہ دیتے ہوئے ایک سفارت کار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ موجودہ حالات میں وزیر اعظم عمران کا دورہ انتہائی اہم ہے۔

 سفارت کار نے مزید کہا کہ وزیر اعظم عمران خان اور روسی صدر ولادی میر پیوٹن دو طرفہ تعاون کے ساتھ ساتھ باہمی دلچسپی کے علاقائی اور بین الاقوامی امور پر تبادلہ خیال کریں گے۔ حال ہی میں وزیراعظم عمران خان نے صدر پیوٹن سے بات کرتے ہوئے توہین مذہب کے معاملے پر ان کے بیان کو سراہا تھا۔

 17 جنوری کو پیوٹن کے ساتھ ٹیلی فونک گفتگو میں، وزیر اعظم عمران نے اس بات پر زور دیا تھا کہ روس کے ساتھ پاکستان کے دوطرفہ تعلقات بہتری کی جانب گامزن ہیں، جس میں تجارتی اور اقتصادی تعلقات اور توانائی کے تعاون پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ انہوں نے پاکستان اسٹریم گیس پائپ لائن منصوبے کی جلد تکمیل کے لیے حکومت کے عزم کا اعادہ کیا۔

وزیراعظم عمران خان کے مطابق، انہوں نے اور پیوٹن نے مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعاون بڑھانے، اعلیٰ سطح کے تبادلے بڑھانے اور افغانستان سے متعلق معاملات پر قریبی رابطے میں رہنے پر اتفاق کیا۔ 

 وزیراعظم عمران خان نے اس بات پر زور دیا کہ پرامن اور مستحکم افغانستان علاقائی استحکام کے لیے اہم ہے۔ سرکاری بیان وزیر اعظم سے منسوب کیا گیا تھا کہ وہ صدر پیوٹن کے دورہ پاکستان اور مناسب وقت پر اپنے روس کے دورے کے منتظر ہیں۔ اب، سفارتی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ تاریخوں کو حتمی شکل دے دی گئی ہے اور اگر آخری لمحات میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی تو وزیر اعظم عمران اور صدر پیوٹن فروری کے آخری ہفتے میں ایک ساتھ کھڑے نظر آئیں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔