مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

وزیر اعظم عمران خان اور پی ڈی ایم کے ایک دوسرے پر لفظوں کے وار

وزیر اعظم عمران خان نے کشمیری عوام سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے جمعہ کے روز اپنے کوٹلی جلسے میں اپوزیشن جماعتوں پر لفظوں کے تیر چلائے اور اپوزیشن کو کوئی این آر او نہ دینے کے عزم کا اعادہ کیا۔ 

دوسری طرف پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے رہنماؤں نے اپنی مظفر آباد کی ریلی میں وزیر اعظم عمران خان پر الزام لگایا کہ وہ کشمیر کا سودا کر چکے ہیں۔ 

تفصیلات کے مطابق گیارہ جماعتی اپوزیشن اتحاد پر تنقید کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران نے کہا کہ میں کسی بھی طرح کے معاہدے کے لئے تیار ہوں ، لیکن میں کبھی لٹیروں کو این آر او نہیں دوں گا۔ میں حزب اختلاف کو جہاں کہیں بھی اپنا لانگ مارچ منعقد کرنے میں مدد دوں گا  لیکن انھیں این آر او نہیں دوں گا۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کی کشمیر سے اظہار یکجہتی، عام تعطیل

یاد رہے کہ جمعرات کو حزب اختلاف کی جماعتوں کے رہنماؤں نے پی ٹی آئی کی زیر قیادت حکومت کے خلاف فیصلہ کن معرکہ آرائی کے لئے تیار ہوگئے ہیں کیونکہ انہوں نے اعلان کیا کہ ان کے لانگ مارچ کا مقام اسلام آباد ہے۔ 

میراتھن سربراہی اجلاس کے بعد خطاب کرتے ہوئے پی ڈی ایم کے صدر مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ حکومت کا تختہ الٹنے کے لئے لانگ مارچ 26 مارچ کو ہوگا۔ 

جمعہ کو مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز نے کہا کہ عمران خان کو بھارت کو کشمیر سے منسلک کرنے سے روکنے میں ناکامی کے لئے جوابدہ ہونا ضروری ہے۔ یہ اقدام جس کے مطابق ان کا بھارت پاکستان میں آمرانہ اصولوں کے دوران بھی سوچ بھی نہیں سکتا تھا۔ 

انہوں نے کہا کہ آپ کی حکومت ہندوستان کو موزوں جواب دینے میں کیوں ناکام رہی۔ آپ کی خاموشی آپ کا جرم ظاہر کرتی ہے۔ آپ کشمیریوں کے لئے آواز اٹھانے میں کیوں ناکام رہے؟ آپ کی خارجہ پالیسی کیا ہے؟ انہوں نے کہا کہ یہ وزیر اعظم عمران خان تھے جنہوں نے ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی کے دوبارہ انتخاب کی خواہش کی۔ 

انہوں نے کہا کہ جب کشمیریوں کو آپ کی آواز کی ضرورت تھی تب آپ آزاد جموں و کشمیر کے وزیر اعظم [راجہ فاروق حیدر] کے خلاف غداری کا مقدمہ درج کرنے میں مصروف تھے۔ 

مریم نواز نے دعوی کیا کہ اب عمران خان کی حکومت مسلم لیگ (ن) پر آئینی ترمیم پر راضی ہونے کے لئے دباؤ ڈالنے کے لئے اپنے بزرگوں کا استعمال کر رہی ہے جس میں آئندہ سینیٹ انتخابات میں ووٹنگ کے انداز کو تبدیل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ میں نے نواز شریف سے کہا ہے کہ ہم اس جعلی حکومت کے ساتھ تعاون نہیں کرسکتے ہیں یہاں تک کہ اگر اس سے ہماری سینیٹ کی نشستوں پر بھی حرج آئے گا۔ 

پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے حاضرین کو بتایا کہ پی ڈی ایم کٹھ پتلی حکومت کو کشمیر کاز فروخت کرنے کی اجازت نہیں دے گی۔ سیلیکٹڈ وزیر اعظم مودی کو موزوں جواب نہیں دے سکتے۔ تحریک انصاف کے اقتدار کے دوران ، بھارت نے کشمیر پر ایک بے مثال اقدام کیا۔ حکومت کشمیر سے متعلق جنرل پرویز مشرف کے فارمولے پر عمل پیرا ہے۔ تاہم ، ہم عمران خان کو کشمیر میں اگلے انتخابات سے پہلے گھر بھیجیں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔