وزیر اعظم شہباز شریف نے ٹریڈرز کے لئے فکس ٹیکس ختم کر دیا

اپنے دورہ قطر کے دوران وزیراعظم شہباز شریف نے منگل کو پاکستانی عوام اور تاجروں کے لیے ریلیف پیکج کا اعلان کیا ہے۔

چھوٹے تاجروں پر مہنگائی کے بوجھ کم

 دوحہ سے قوم سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے عوام بالخصوص چھوٹے تاجروں پر مہنگائی کے بوجھ کو کم کرنے کے لیے حکومتی اقدامات کے بارے میں بات کی۔ 

وزیراعظم نے تاجروں پر فکسڈ ٹیکس ختم کرنے کا اعلان کردیا۔ خوردہ فروشوں پر مختلف رقموں کے ایک مقررہ ماہانہ ٹیکس کی تجویز حال ہی میں وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے انہیں ٹیکس نیٹ میں لانے کے ساتھ ساتھ انتہائی ضروری ذخائر کو بڑھانے کے لیے پیش کی تھی۔ 

 اس ماہ کے شروع میں اسماعیل نے کہا تھا کہ حکومت اس تجویز کو واپس لے رہی ہے۔ 

 دوحہ میں شہباز شریف نے کہا کہ ہم نے تاجروں پر سے مقررہ ٹیکس ہٹا دیا ہے، کیونکہ ہم انہیں مشکل سے نہیں نکال سکتے۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت “دن رات کام کر کے” مہنگائی کو کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ 

ہم مہنگائی پر قابو پانے میں بہت زیادہ کامیاب نہیں ہو سکے ہیں، لیکن ہم کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے تسلیم کیا کہ مخلوط حکومت کی کوششوں نے ڈیفالٹ کو روکا ہے۔ 

 انہوں نے پی ٹی آئی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ پچھلی حکومت کی خوفناک کارکردگی کی وجہ سے ملک تقریباً دیوالیہ ہونے کے قریب پہنچ چکا تھا۔ 

وزیر اعظم نے کہا کہ تاجروں پر فکسڈ ٹیکس ہماری مرضی کے خلاف لگایا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ فکسڈ ٹیکس کے نفاذ کا جائزہ لینے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | سندھ میں سکول کالجز جمعرات تک بند رہیں گے

یہ بھی پڑھیں | پاکستان میں درہم شارٹ ہو گیا لیکن کیوں؟

 وزیراعظم نے کہا کہ فکسڈ ٹیکس ختم کرنے سے ٹیکس کا فرق 42 ارب روپے بڑھ جائے گا تاہم حکومت تاجروں پر بوجھ ڈالنے کے بجائے اسے دوسرے ذرائع سے پُر کرے گی۔

 وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ اگر حکومت مہنگا تیل زیادہ نرخوں پر خریدتی ہے تو اسے صارفین کے آنے والے بلوں میں ایڈجسٹ کیا جاتا ہے۔ 

جولائی اور اگست میں فیول ایڈجسٹمنٹ میں اضافہ ہوا، لیکن 17.1 ملین صارفین کو چارجز کی ادائیگی سے استثنیٰ دیا گیا ہے۔

 وزیر اعظم نے مزید کہا کہ ان کی انتظامیہ پچھلے کچھ دنوں سے فیول ایڈجسٹمنٹ پر کام کر رہی تھی۔ 

وزیر اعظم نے ٹیوب ویل استعمال کرنے والے زرعی صارفین کے لیے فیول ایڈجسٹمنٹ چارجز میں چھوٹ کا بھی اعلان کیا۔

 انہوں نے کہا کہ ہم 13 ملین بڑے بجلی صارفین پر فیول ایڈجسٹمنٹ عائد کرنے کا تجزیہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ فیول ایڈجسٹمنٹ چارجز کے عمل کی وضاحت کل وفاقی وزیر برائے توانائی خرم دستگیر خان کریں گے۔ 

وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں ثابت قدمی اور حوصلے کے ساتھ آگے بڑھنے کی ضرورت ہے، انہوں نے مزید کہا کہ قوم کو محنت اور خلوص کے ساتھ کام کرنا ہوگا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔