وزیر اعظم شہباز شریف نے بند پاور پلانٹس کو دوبارہ کھولنے کا حکم دے دیا

بجلی کے بحران کم کرنے کے لیے بند پاور پلانٹس

وزیر اعظم شہباز شریف نے اتوار کو حکام کو ملک میں بجلی کے بحران کو کم کرنے کے لیے بند پاور پلانٹس کو دوبارہ کھولنے کا حکم دے دیا ہے۔

 لاہور میں بجلی کی صورتحال پر اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے بجلی کی طویل بندش کے حوالے سے وضاحت بھی طلب کی۔ 

 اجلاس میں وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال اور وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک نے شرکت کی۔ 

 وزیر توانائی خرم دستگیر۔ وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب۔ مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما اور ایم این اے شاہد خاقان عباسی؛ وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل اور وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے پبلک پالیسی اینڈ اسٹریٹجک کمیونیکیشن فہد حسین نے ویڈیو لنک کے ذریعے جلسے میں شرکت کی۔ 

 اجلاس میں توانائی سے متعلق اعلیٰ سرکاری حکام نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں ملک میں جاری بجلی کے بحران پر تبادلہ خیال کیا گیا جس میں وزیراعظم نے بند پاور پلانٹس کو فوری طور پر بحال کرنے کا حکم دیا۔ 

 وزیراعظم نے حکام کو ہدایت کی کہ بجلی کی بندش سے متعلق رپورٹ فوری طور پر پیش کی جائے جس میں ان کی وجوہات واضح کی جائیں۔ 

وزیر اعظم شہباز شریف نے مزید کہا کہ صوبوں کو پینے کے پانی اور زرعی سہولیات کی فراہمی سے متعلق مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں۔ 

  انہوں نے مزید کہا کہ انڈس ریور سسٹم اتھارٹی کو اس مقصد کے لیے صوبوں کی مشاورت سے “آزادانہ” فیصلے کرنے چاہییں۔

یہ بھی پڑھیں | پیٹرول کی بڑھتی قیمتوں کے ساتھ پیٹرول کے استعمال میں کمی

یہ بھی پڑھیں | گورنمنٹ لوڈ شیڈنگ کو کم کرنے کے بہتر آپشنز پر غور کر رہی ہے، وزیر اعظم

 ملک میں بجلی کا شارٹ فال 7 ہزار 787 میگاواٹ تک پہنچ گیا ہے جس کے باعث ملک کے مختلف حصوں میں 16 گھنٹے تک بجلی کی بندش کا سلسلہ جاری ہے۔ 

پاور ڈویژن کے ذرائع نے بتایا کہ ملک میں بجلی کی پیداوار 21 ہزار 213 میگاواٹ رہی جب کہ مجموعی طلب 29 ہزار میگاواٹ رہی۔ ہائیڈرو ذرائع سے مجموعی طور پر 5,430 میگاواٹ اور سرکاری تھرمل پلانٹس سے 1,705 میگاواٹ بجلی پیدا کی جا رہی ہے جبکہ نجی شعبے کے پاور پلانٹس کی کل پیداوار 10,241 میگاواٹ ہے۔ 

 ونڈ پاور پلانٹس 1,629 میگاواٹ اور سولر پلانٹس 113 میگاواٹ بجلی پیدا کر رہے ہیں۔ 

 باگاس پاور پلانٹس 120 میگاواٹ اور جوہری ایندھن 2,275 میگاواٹ پیدا کر رہے ہیں۔ 

بجلی کی بندش کا دورانیہ ان علاقوں میں اور بھی طویل ہے جہاں نقصانات بہت زیادہ ہیں۔ 

ملک بجلی کے شدید بحران میں ڈوب گیا ہے جس کی زیادہ تر وجہ بجلی کے اداروں میں بدانتظامی، نااہلی، بجلی کی چوری اور سیاسی طور پر حوصلہ افزائی کی گئی تقرریاں ہیں۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔