وزن کم کرنے کے لئے دلیا کھانا غلط بھی ثابت ہو سکتا ہے، ماہرین صحت

 پاکستان پاکستان

جب آپ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہوں تو دلیا آپ کے لیے ناشتے کے بہترین آپشنز میں سے ایک ہو سکتا ہے۔ اس کے اعلیٰ فائبر مواد اور پروٹین سے بھرپور ٹاپنگز کی صلاحیت کے ساتھ، یہ آپ کے دن کو شروع کرنے کا بہترین طریقہ ہو سکتا ہے۔ 

 بدقسمتی سے،  صحت مند ترین کھانے میں بھی غیر صحت بخش بننے کی صلاحیت ہوتی ہے۔ اگرچہ دلیا آپ کے وزن میں کمی کے اہداف میں آپ کی مدد کر سکتا ہے، لیکن یہ ان میں بھی خلل ڈال سکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے گو-ویلنیس کے مصنف کورٹنی ڈی اینجیلو، ایم ایس، آر ڈی سے بات کی تاکہ آپ وزن کم کرنے کی کوشش کرتے وقت دلیا کے کھانے کی کچھ غیر صحت بخش عادات کو سیکھیں۔ 

1۔ اسے سادہ کھانا۔ 

 دلیا ایک صحت مند کاربوہائیڈریٹ ہے جس میں فائبر کی اچھی مقدار ہوتی ہے، لیکن ڈی اینجیلو نے خبردار کیا ہے کہ اگر آپ سادہ جئی کھاتے ہیں تو آپ کو زیادہ متوازن کھانا نہیں ملے گا۔ ڈی اینجیلو کہتے ہیں کہ دلیا میں کیلوریز کم ہوتی ہیں اور اس میں پروٹین یا چکنائی بہت کم ہوتی ہے، اس لیے اس کے کھانے کے فوراً بعد آپ کو دوبارہ بھوک لگنے کا امکان ہوتا ہے، جس کی وجہ سے آپ بعد میں غیر صحت بخش اسنیکس تک پہنچ سکتے ہیں۔

 ڈی اینجیلو کہتے ہیں کہ اس کی وجہ سے، وہ تجویز کرتی ہے کہ آپ دلیا میں زیادہ سے زیادہ فائبر اور پروٹین شامل کریں تاکہ ترپتی ہو اور بلڈ شوگر میں اضافے کو روکا جا سکے۔

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم ہاؤس میں مقتول سری لنکن مینجر کے حوالے سے آج تعزیتی ریفرنس منعقد ہو گا   

2۔ بہت زیادہ چینی شامل کرنا 

 اپنے دلیا میں میٹھا شامل کرنا، جیسے میپل کا شربت، شہد، یا براؤن شوگر، اس سے دلیا مزیدار ہو سکتا ہے لیکن یہ مانیٹر کرنا ضروری ہے کہ آپ کتنا استعمال کر رہے ہیں کیونکہ یہ ہمارے احساس سے کہیں زیادہ تیزی سے بڑھ سکتا ہے۔ 

 ڈی اینجیلو کا کہنا ہے کہ اپنے دلیا میں چینی شامل کرنے سے آپ کے خون میں شوگر کی سطح بڑھ سکتی ہے، جس کا مطلب ہے کہ آپ کا جسم دن بھر شوگر کی زیادہ مقدار پر انحصار کرنا شروع کر دے گا۔ اس کے بجائے تازہ بیریاں شامل کرنے کی کوشش کریں، جس میں قدرتی چینی کے ساتھ ساتھ اینٹی آکسیڈنٹس بھی ہوں، جن کے صحت کے لیے بے شمار فوائد ہیں۔

3۔ اپنے دلیا میں بہت زیادہ ٹاپنگ ڈالنا۔ 

 دلیا کا ایک دلچسپ پہلو یہ ہے کہ اسے اپنے پسندیدہ ٹاپنگس جیسے پھل، گری دار میوے، یا بادام کے مکھن سے تیار کرتے ہیں۔ تاہم، ڈی اینجیلو نے بتایا کہ اگر آپ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، تو آپ اپنی ٹاپنگز کی تعداد کو کم کرنے سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔ 

بہت زیادہ ٹاپنگز رکھنے سے آپ کی مجموعی کیلوریز میں اضافہ ہو سکتا ہے، اس لیے چند ٹاپنگز پر قائم رہیں جو وزن کم کرنے میں مددگار ثابت ہوتی ہیں، جیسے کہ پروٹین، پھل اور فائبر۔

4۔ زیادہ پروٹین شامل نا کرنا 

 آخر میں، اگر آپ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تو دلیا کی بدترین عادات میں سے ایک یہ ہے کہ آپ کے کھانے میں کافی پروٹین شامل نہ ہو۔ ڈی اینجیلو کے مطابق، اگر آپ وزن کم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تو اپنے پروٹین کی مقدار کو بڑھانا کلیدی حیثیت رکھتا ہے کیونکہ پروٹین بھوک کے ہارمون کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے اور کئی ترپتی ہارمونز کو بڑھاتا ہے، جس کے نتیجے میں آپ کو زیادہ دیر تک پیٹ بھرنے اور کم بھوک محسوس ہوتی ہے۔

 آپ اپنی پروٹین کی مقدار میں کچھ پروٹین والی بھاری ٹاپنگس جیسے گری دار میوے یا پروٹین پاؤڈر شامل کر سکتے ہیں، یا آپ ناشتے میں سائیڈ آئٹم جیسے انڈے یا ٹرکی ساسیج شامل کر سکتے ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں