مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

ن لیگ اور پیپلرز پارٹی کے مقابلے میں نیب نے 200 بلین کی زائد رقم جمع کی، وزیر اعظم عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب) نے مسلم لیگ (ن) اور پی پی پی کے مشترکہ دور حکومت کے دوران ہونے والی ریکوری کے مقابلہ میں گذشتہ دو سالوں میں کم از کم 200 ارب روپے زیادہ کی رقم وصولی کی ہے۔

 ٹویٹر پر بات کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ جب ریاستی اداروں کو آزادانہ طور پر اور بغیر کسی سیاسی مداخلت کے کام کرنے کی اجازت دی جاتی ہے تو قوم اس سے فائدہ اٹھاتی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | گورنمنٹ نے مرحلہ وار تعلیمی ادارے کھولنے کا اعلان کر دیا

وزیر اعظم نے کہا کہ نیب کی طرف سے پچھلے دس سالوں 2008 سے 2018 میں 104 ارب روپے ریکور کئے گئے جبکہ نیب کی جانب سے صرف 2019 اور 2020 میں کرپٹ افراد سے 389 ارب روپے کی ریکوری کی گئی۔

 وزیر اعظم عمران خان نے مزید بدعنوانی کی بات کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب میں نیب نے بدعنوان حکمرانوں کے ماتحت گذشتہ 10 سالوں میں 3 ارب روپے کے مقابلے میں 27 ماہ میں 206 ارب روپے کی وصولی کی ہے۔ 

وزیر اعظم نے کہا کہ بدعنوان حکمرانوں کے  10 سال تاریک دور کے تھے۔ انہوں نے دعوی کیا کہ جب ادارے آزاد ہوں تو احتساب کا کام بہتر ہوتا ہے۔ 

یاد رہے کہ نیب کراچی کی کارکردگی نجی اخبار کی ایک رپورٹ کے مطابق ، 2020 میں ، جہاں دیگر سرکاری ادارے نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کرسکے ، وہیں نیب کراچی کی کارکردگی بھی قابل ذکر نہیں ہے۔

زرائع کے مطابق 2020 میں نیب کراچی نے ریکارڈ 105 مقدمات کی تحقیقات کیں اور 150 سے زائد انکوائریوں کو رجسٹر کیا  جبکہ سال بھر میں صرف 28 ریفرنسز رجسٹرڈ تھے۔

 حیرت کی بات یہ ہے کہ عدالتیں کسی بھی معاملے میں ملزمان کو سزا نہیں دے سکی کیونکہ وہ قصوروار نہیں پائے گئے۔ زیادہ تر معاملات میں ، مشتبہ افراد کو بری کردیا گیا۔  نیب سندھ نے صوبے کے سرکردہ سیاسی رہنماؤں کے خلاف تحقیقات کیں۔ تاہم ، اس کا کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔ ان افراد میں شرجیل انعام میمن ، جام خان شورو ، اویس قادر ، تیمور تالپور ، مصطفیٰ کمال ، آغا سراج درانی ، نثار کھوڑو ، سکندر رہپوٹو ، ناصر شاہ ، مراد علی شاہ اور قائم علی شاہ شامل ہیں۔ نیب کراچی نے سب سے زیادہ اراضی کے فراڈ ریفرنسز اور التجا سودا کا معاملہ درج کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔