مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

نیپرا نے پاور کمپنیوں سے لوڈشیڈنگ پر وضاحت طلب کر لی

ملک بھر میں لگاتار تیسرے روز بھی غیر اعلانیہ بجلی لوڈشیڈنگ جاری رہنے کے بعد حکومت نے بدھ کے روز اضافی پیداواری صلاحیت کے باوجود تکنیکی وجوہات کی بناء پر نظام میں فراہمی کی کمی کی تصدیق کردی ہے۔

 نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) نے ضرورت سے زیادہ لوڈشیڈنگ کا سخت نوٹس لیا اور کے الیکٹرک سمیت بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں (ڈسکو) سے وضاحت طلب کی ہے۔ 

دوسری طرف وزیر توانائی حماد اظہر نے کہا کہ پانی کی عدم دستیابی کی وجہ سے کچھ تھرمل پاور پلانٹس کی ’بندش‘ اور تربیلا ڈیم سے ناکافی فراہمی کی وجہ سے یہ قلت پیدا ہوئی یے۔

 پاور ڈویژن ذرائع نے بتایا کہ پاکستان ایل این جی لمیٹڈ کے ذریعہ ایل این جی برتن کی منسوخی کی وجہ سے گیس کی قلت کی وجہ سے اس سال کی اعلی طلب کے باوجود کچھ تھرمل پلانٹ کام نہیں کرسکتے ہیں کیونکہ قیمت زیادہ ہونے کی وجہ سے اور اس کا اثر 150 ملی میٹر فی گھنٹہ تھا۔ (دن میں دس لاکھ مکعب فٹ)۔ اس کے نتیجے میں ، مظفر گڑھ ، فیصل آباد ، اورینٹ ، سیف ، ہالمون اور آلٹرن پاور سمیت گیس سے چلنے والے متعدد پلانٹوں کو گیس فراہم نہیں کی جاسکی اور وہ زیادہ تر گرڈ سے باہر ہی رہے ، جبکہ تین میگا ایل این جی پر مبنی پلانٹ حویلی بہادر شاہ ، بلوکی اور بھکی – کاپکو اور فوجی کبیر والا کے علاوہ بھی کم صلاحیت پر کام کرنا پڑا۔ 

ذرائع نے بتایا کہ اگرچہ مختصر مدت کے لئے متبادل ذرائع سے گیس کی قلت کو دور کیا گیا لیکن رواں ماہ کے دوران ایندھن کی فراہمی کی طرف سے چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑا۔ تاہم ، اس نظام کی جزوی بحالی کے بارے میں توقع کی جارہی ہے کہ اگلے کچھ دنوں میں پانی کی بہتر دستیابی سے بجلی کی پیداوار میں بہتری آئے گی۔

 ذرائع نے بتایا کہ ہنگری کی فرم ایم او ایل کے گیس فیلڈ میں 16۔17 جون کو سالانہ ٹرنرآؤنڈ (اے ٹی اے) جانا تھا جس سے گھریلو گیس کی فراہمی میں 120-140 ملی میٹر فی گھنٹہ کمی ہوگی۔ اس کے بعد 29 جون کو اینگرو الینگی ٹرمینل کی عدم فراہمی کی وجہ سے اس سے بھی زیادہ بڑے بحران پیدا ہونے کا امکان ہے جس سے ایک ہفتے تک گیس کی فراہمی متاثر ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں | میرا مقصد فوج کے خلاف بات کرنا نہیں تھا، حامد میر نے رجوع کر لیا

 کمپنی نے 29 جون سے ٹرمینل کی بحالی کے لئے استعمال ہونے والی اصطلاح ، ڈرائی ڈاکنگ کے لئے پہلے ہی نوٹس دے دیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ اس اکاؤنٹ میں گیس کی کمی 300 سے 650 ملی میٹر فی گھنٹہ کے درمیان ہوگی اور نہ صرف بجلی کے شعبے بلکہ دیگر شعبوں پر بھی اس کا منفی اثر پڑتا ہے۔ 

ذرائع کا کہنا ہے کہ کمپنی تقریبا دو سالوں سے ٹرمینل کی خشک ڈاکنگ میں تاخیر کررہی تھی ، لیکن بدقسمتی سے اس نے جون میں بجلی کی طلب کے عروج پر آخری بحالی کا شیڈول طے کیا تھا۔ 

دریں اثنا ، پیر سے ملک بھر سے ٹرپنگ اور لوڈشیڈنگ کی وجہ سے بجلی کی بندش کی شکایات میں اضافہ ہوا ہے۔ پاور ڈویژن نے باضابطہ طور پر اس بات کی تصدیق کی ہے کہ گذشتہ تین دن کے دوران ایک ہزار سے ایک ہزار پانچ سو میگاواٹ بجلی کی قلت ہے اور اس کی وجہ تربیلا ڈیم سے کم میگاواٹ کی فراہمی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔