نور مقدم کیس: ملزم ظاہر جعفر کی خود کو “ذہنی مریض” ظاہر کرنے کی کوشش

 پاکستان پاکستان

نورمقدم قتل کیس

کے بنیادی ملزم ظاہر ذاکر جعفر کے وکیل نے بدھ کو اسلام آباد کی عدالت میں درخواست دائر کی ہے جس میں ان کی ذہنی حالت کا تعین کرنے کے لیے میڈیکل بورڈ تشکیل دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ 

 ایڈووکیٹ سکندر ذوالقرنین سلیم کی جانب سے ایڈیشنل سیشن جج عطا ربانی کی عدالت میں دائر کی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ظاہر جعفر شدید دماغی بیماری میں مبتلا ہے جس کا مقننہ اور مقامی اور بین الاقوامی قانون کے احکامات کے مطابق مجاز میڈیکل بورڈ کے ذریعے تعین کیا جانا ضروری ہے۔ 

یاد رہے کہ 27 سالہ نور کو 20 جولائی کو دارالحکومت کے اعلیٰ درجے کے سیکٹر ایف-7/4 میں ایک رہائش گاہ پر قتل کیا گیا تھا۔ ظاہر جعفر کے خلاف اسی دن پہلی اطلاعاتی رپورٹ درج کی گئی تھی جسے قتل کی جگہ سے گرفتار کیا گیا تھا۔ اس پر دفعہ 302 ( مقتول کے والد شوکت علی مقدم کی شکایت پر تعزیرات پاکستان (پی پی سی) کے تحت مقدمہ درج کیا گیا

یہ بھی پڑھیں | پچاس سال کے بعد بہترین کھانے عادت کون سی ہے؟ جانئے طبی حکماء سے   

 ایک ٹرائل کورٹ نے 14 اکتوبر کو ظاہر کے ساتھ 11 دیگر افراد پر فرد جرم عائد کی تھی- اس کے والدین، ان کے تین گھریلو عملے بشمول افتخار (چوکیدار)، جان محمد (باغبان) اور جمیل (باور)، تھیراپی ورکس کے سی ای او طاہر ظہور اور ملازمین امجد، دلیپ کمار، عبدل۔ حق، وامق اور ثمر عباس بھی کیس میں شامل ہیں۔ قتل کے مقدمے کی باقاعدہ سماعت 20 اکتوبر کو شروع ہوئی۔ 

 آج کی سماعت کے دوران دائر درخواست میں کہا گیا ہے کہ جب ٹرائل کورٹ نے 14 اکتوبر کو ملزم کے خلاف الزامات طے کیے تو ظاہر نے الزام کا جواب نہیں دیا کیونکہ وہ ٹرائل کورٹ کی کارروائی کو سمجھنے سے قاصر تھا جو کہ واضح ہے۔ 

 اس میں کہا گیا ہے کہ جج نے عدالت میں پیشی کے دوران خود ظاہر جعفر کے طرز عمل اور ذہنی حالت کا مشاہدہ کیا اور یہ تمام نیوز اور ٹی وی چینلز پر نشر کیا گیا اور معزز عدالت نے ملزم (ظاہر) کو پولیس اہلکاروں کے ذریعے واپس جیل بھیج دیا۔ 

ملزم نے 3 نومبر کو کیس کی سماعت کے دوران جج ربانی پر فحش باتیں کرتے ہوئے کارروائی میں خلل ڈالا تھا جس نے پولیس اہلکاروں کو اسے لے جانے کی ہدایت کی تھی۔ واقعے کی ویڈیو فوٹیج میں پولیس اہلکاروں کو ظاہر کو کمرہ عدالت سے گھسیٹتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ جج نے ایک تحریری حکم نامے میں ظاہر کو متنبہ کیا تھا کہ اگر اس نے اپنا غصہ جاری رکھا اور اپنا رویہ درست نہ کیا تو اس کی عدالت میں پیشی کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں