نواز شریف کو وطن واپس لانے کے لئے برطانیہ بھی جانا پڑا تو جاؤں گا، عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ اگر ضرورت پیش آئے تو وہ برطانیہ جانے کے لئے راضی ہیں اور برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن سے نواز شریف کی لندن سے جلاوطنی کے لئے بات کریں گے۔

 یہ بات وزیر اعظم نے نجی نیوز چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہی جہاں انہوں نے اپوزیشن رہنماؤں خصوصا مسلم لیگ (ن) کے رہنما نواز شریف پر کڑی تنقید کی۔ وزیر اعظم عمران نے کہا کہ نواز شریف ہمیشہ عدلیہ اور اسٹیبلشمنٹ کے حق میں تھے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ان کی حکومت نواز شریف کو جلد واپس لائے گی۔ انشاءاللہ ، ہم اسے واپس ملک لائیں گے اور اسے جیل میں رکھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کہتا ہے ہم پاک فوج کو پنجاب پولیس میں تبدیل کرنا چاہتے ہیں جبکہ نواز شریف مسلح افواج کو قابو کرنا چاہتے ہیں۔ 

وزیر اعظم عمران خان نے حزب اختلاف کے رہنماؤں کو “چور” قرار دیا اور کہا کہ وہ پاکستان میں کبھی بھی ان کی حکومت نہیں بننے دیں گے یہاں تک کہ وزیر اعظم  نے کہا کہ اگر میں اقتدار میں نا بھی رہا تو ان چوروں کو حکومت میں واپس نہیں آنے دوں گا۔ اگر وہ واپس آ گئے تو میں عوام کو متحرک کروں گا اور احتجاج کرنے کے لئے انہیں سڑکوں پر نکل آؤں گا۔

مزید پڑھئے | نیب کا نواز شریف کے خلاف ایک اور کیس دائر کرنے کا فیصلہ

 وزیر اعظم نے کہا کہ وہ جانتے ہیں کہ حزب اختلاف کے رہنما کس سے چپکے سے ملاقاتیں کرتے رہتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ انہیں اس طرح کی ملاقاتوں کے بارے میں سب اطلاعات موصول ہوتی ہیں۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ وہ حزب اختلاف سے کسی بھی معاملے پر بات کرنے کے لئے تیار ہیں سوائے این آر او کے۔  انہوں نے کہا کہ اگر حکومت انہیں این آر او دے تو ریاست تباہ ہو جائے گی۔

اس سوال کے جواب میں کہ کیا ملک میں مڈٹرم انتخابات ہوں گے، وزیر اعظم نے کہا کہ وہ اس کے لئے تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اچھے وقت کی امید کرنی چاہیے اور برے وقت کے لئے تیار رہنا چاہیے۔ 

 انہوں نے کہا کہ مجھے خوشی ہوگی کیونکہ اگر پاکستان میں دوبارہ انتخابات ہوئے تو میں واضح اکثریت کے ساتھ دوبارہ جیتوں گا۔ ایک اور سوال کے جواب میں ، وزیر اعظم نے کہا کہ سینیٹ کے انتخابات شیڈول کے مطابق  ہوں گے۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *