میٹا کمپنی نے یورپ میں فیسبک اور انسٹاگرام بند کرنے کی دھمکی دے دی

پیرنٹ کمپنی میٹا نے کہا ہے کہ فیس بک اور انسٹاگرام پورے یورپ میں بند ہو سکتے ہیں۔ 

 یہ مسئلہ یورپی ڈیٹا ریگولیشنز پر آتا ہے جو میٹا، کمپنی جسے پہلے فیس بک کے نام سے جانا جاتا تھا، کو امریکہ میں مقیم سرورز پر یورپیوں کے ڈیٹا کی منتقلی، ذخیرہ اور پروسیسنگ سے روکتا ہے۔ 

امریکی سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن کو اپنی سالانہ رپورٹ میں میٹا نے گزشتہ جمعرات کو خبردار کیا کہ اگر کوئی نیا فریم ورک نہیں اپنایا گیا اور کمپنی معاہدوں کے موجودہ ماڈل کو مزید استعمال نہیں کرسکی تو اسے شاید یورپ سے دور ہونا پڑے گا۔

یہ بھی پڑھیں | اگر اسٹیبلشمنٹ غیر جانبدار رہے تو لانگ مارچ کامیاب ہو گا، بلاول بھٹو

 میٹا نے کہا کہ ممالک کے درمیان صارف کے ڈیٹا کی پروسیسنگ کاروبار اور اشتہاری ہدف کے لیے اہم ہے۔

 میٹا نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اگر ہم ان ممالک اور خطوں کے درمیان اور ان کے درمیان ڈیٹا منتقل کرنے سے قاصر ہیں جہاں ہم کام کرتے ہیں، یا اگر ہمیں اپنی مصنوعات اور خدمات کے درمیان ڈیٹا کا اشتراک کرنے سے روک دیا گیا ہے، تو یہ ہماری خدمات فراہم کرنے کی ہماری صلاحیت کو متاثر کر سکتا ہے، جس طریقے سے ہم خدمات فراہم کرتے ہیں۔ 

 میٹا نے واضح کیا کہ اس کا خیال ہے کہ وہ اس سال ایک نئے معاہدے تک پہنچنے کے قابل ہو جائے گا لیکن اگر ایسا نہیں ہوتا ہے تو میٹا نے بتایا کہ ہم ممکنہ طور پر یورپ میں فیس بک اور انسٹاگرام سمیت اپنی بہت سی اہم مصنوعات اور خدمات پیش کرنے سے قاصر ہوں گے۔  ہم یورپ سے قطعی طور پر دور ہونے کی خواہش نہیں رکھتے لیکن حقیقت یہ ہے کہ میٹا اور بہت سے دوسرے کاروبار، تنظیمیں اور خدمات، یورپ اور امریکہ کے درمیان ڈیٹا کی منتقلی پر انحصار کرتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔