موٹروے کیس کے ملزم عابد نے خود سرنڈر کیا، والد کا بیان

منگل کے روز ایک انٹرویو کے دوران ملزم عابد کے والد نے دعوی کیا ہے کہ موٹر وے گینگ ریپ کیس کا سب سے اہم ملزم عابد ملہی خود پولیس کے سامنے پیش ہوا ہے اور گرفتاری دی ہے۔ 

یاد رہے کہ ملزم عابد کو پولیس نے خود ایک روز قبل فیصل آباد سے گرفتار کیا تھا اور حکام کے مطابق انٹلیجنس بیورو (آئی بی) ، پولیس کی اسپیشل برانچ اور دیگر ایجنسیوں نے پنجاب پولیس کو ملزم کی گرفتاری سے قبل اس کا پتہ لگانے کی اطلاع دی تھی۔ 

تاہم ، ملزم کے والد کے مطابق ، عابد نے پولیس کو خود فون کیا تھا جس کے بعد انہوں نے اسے خالد بٹ نامی شخص کے سامنے لاہور کی مانگا منڈی کے علاقے سے گرفتار کیا تھا۔

ملزم کے والد نے مطالبہ کیا ہے کہ پولیس ان کی فیملی کی خواتین کو رہا کردے کیونکہ انھیں بھی حراست میں لیا گیا ہے۔ ملزم کے والد نے بتایا کہ عابد نے گھر آنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ شام ساڑھے چھ بجے وہ واپس آگیا۔ انہوں نے کہا کہ عابد کو خالد بٹ کی کار میں کرائم انویسٹی گیشن ایجنسی (سی آئی اے) کے دفتر بھیجا گیا تھا۔ 

اس کے برعکس ، انسپکٹر جنرل پولیس انعام غنی نے دعوی کیا ہے کہ ملزم عابد کو پولیس نے گرفتار کیا ہے۔ 

یاد رہے کہ موٹر وے عصمت دری کے مقدمے کا مرکزی ملزم مبینہ طور پر جنسی زیادتی کا ارتکاب کرنے کے تقریبا ایک ماہ کے بعد سے چار بار پنجاب پولیس کے چنگل سے فرار ہوکر گرفتاری سے بچنے میں کامیاب ہوگیا تھا۔

موٹروے کیس واقعہ کیا ہے؟

 زرائع کے مطابق 9 ستمبر کو گوجر پورہ پولیس کے دائرہ اختیار میں آنے والے علاقے میں دو ڈاکوؤں نےلاہور سیالکوٹ موٹروے پر تین بچوں کی ماں کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی تھی۔ یہ عورت اپنے بچوں سمیت گجرانوالہ جارہی تھی جب صبح ساڑھے ایک بجے اسے پیٹرول نا ہونے کے باعث موٹر وے گوجر پورہ سیکشن میں مجبورا رکنا پڑا۔

خاتون  نے فورا ہی ایک رشتہ دار کو فون کیا اور اسے اس کا لوکل ایڈریس بھیج دیا۔ اس نے اس سے موٹر وے پولیس ہیلپ لائن 130 پر بھی ڈائل کرنے کو کہا جس سے مبینہ طور پر اسے کوئی جواب نہیں ملا۔ اسی اثناء میں ، مبینہ طور پر دو ڈاکو کار کے قریب پہنچے دروازے توڑ دئیے اور خاتون اور اس کے بچوں کو قریب کی جھاڑیوں میں لے گئے جہاں انہوں نے بچوں کے سامنے مبینہ طور پر اس کے ساتھ زیادتی کی۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *