ملک بھر میں اے آر وائی کی نشریات بند کر دی گئیں

پیر کی شام کو ملک کے مختلف حصوں میں اے آر وائی نیوز کی نشریات معطل کردی گئی ہیں۔ 

تفصیلات کے مطابق پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کے کیبل آپریٹرز کو احکامات کے بعد پاکستان کے کچھ حصوں میں اے آر وائی نیوز کی ٹرانسمیشن بند کر دی گئی۔ 

کراچی، لاہور، اسلام آباد، سیالکوٹ، حیدرآباد، فیصل آباد اور دیگر شہروں میں اے آر وائی نیوز کی نشریات معطل کردی گئیں۔ راولپنڈی شہر کے مختلف علاقوں میں اے آر وائی نیوز کی پوزیشن بھی تبدیل کر دی گئی۔ 

اے آر وائی نیوز کی بندش کے بعد پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے متعدد رہنماؤں بشمول شیریں مزاری، شہباز گل اور دیگر نے ٹوئٹر پر پیمرا کے غیر قانونی اقدام کی مذمت کی۔ 

اسٹریٹجک میڈیا سیل 

اے آر وائی نیوز کی نشریات کی معطلی اسلام آباد ہائی کورٹ کے احکامات کی صریح خلاف ورزی ہے جس نے پیمرا کو اے آر وائی نیوز کو ٹی وی چینلز کی ترتیب پر کم نمبروں پر بند کرنے اور چھوڑنے سے روک دیا تھا۔ 

یہ بھی پڑھیں | ملک بھر میں یوم عاشورہ نہایت عقیدت سے منایا جا رہا ہے

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف نے سیلاب زدگان کی مدد کے لئے امدادی فنڈ قائم کر دیا

 ٹرانسمیشن کی معطلی اے آر وائی نیوز کی ایک رپورٹ نشر کرنے کے چند گھنٹے بعد ہوئی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این) نے مبینہ طور پر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور اس کے چیئرمین عمران خان کو بدنام کرنے کے لیے اپنے اسٹریٹجک میڈیا سیل کو فعال کر دیا ہے۔ 

 یہ رپورٹ 27 جون کو اے آر وائی نیوز نے نشر کی گئی۔

 حکمران مسلم لیگ ن کے سٹریٹجک میڈیا سیل کو فعال کرنے کے حوالے سے بات درست ثابت ہوئی۔ یہ بات سامنے آئی کہ مسلم لیگ (ن) نے اپنے اسٹریٹجک میڈیا سیل کو عمران خان اور پی ٹی آئی کے خلاف ایک بدنیتی پر مبنی مہم چلانے کے لیے فعال کیا ہے تاکہ یہ ثابت کیا جا سکے کہ وہ فوج مخالف یا مسلح افواج مخالف جماعت ہے۔ 

 صدر کے خلاف مہم کے پیچھے پی ایم ہاؤس

 آج یہ بات بھی سامنے آئی کہ بلوچستان ہیلی کاپٹر حادثے کے شہداء کی نماز جنازہ کے حوالے سے صدر عارف علوی کے خلاف شروع ہونے والے تنازعات اور آن لائن مہم کے پیچھے مبینہ طور پر وزیراعظم ہاؤس کا ہاتھ ہے۔

 آئی ایچ سی نے پیمرا کو اے آر وائی نیوز کو اس کے اصل نمبر پر بحال کرنے کی ہدایت کر دی ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔