معاشی بدحالی اپنی جگہ؛ اراکین پارلیمنٹ کو 90 ارب روپے ملیں گے

اراکین پارلیمنٹ کو 90 ارب روپے ملیں گے

قومی کفایت شعاری کمیٹی کی جانب سے ارکان پارلیمنٹ کو اربوں روپے دینے کے عمل پر نظرثانی کی سفارش کے بعد حکومت نے صوابدیدی اخراجات کے بجٹ کو مزید بڑھا کر 90 ارب روپے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

 ملک کے ڈیفالٹ کرنے کے خطرے کے بعد قومی کفایت شعاری کمیٹی نے وفاقی کابینہ کو موجودہ تقریباً 77 سے کم کرکے صرف 30 ارکان کرنے کی سفارش کی ہے جن میں وزیراعظم کے معاونین خصوصی بھی شامل ہیں۔ 

الاؤنس میں 10 فیصد کمی

 کمیٹی نے قانون سازوں کی تنخواہوں اور الاؤنس میں 10 فیصد کمی کے ساتھ ساتھ وزارتوں کے موجودہ اخراجات میں 15 فیصد کمی کا مطالبہ کیا ہے۔

کمیٹی نے کچھ مفید سفارشات کو حتمی شکل دی اور اب یہ حکومت پر منحصر ہے کہ وہ یا تو ان پر عمل درآمد کرے یا نا کرے۔

ارکان پارلیمنٹ کو مزید 3 ارب روپے دینے کا فیصلہ کیا ہے

 وزارت منصوبہ بندی کے ذرائع نے بتایا کہ حکومت نے ایک تعلیمی ادارے اور انوویشن سپورٹ پراجیکٹ کے بجٹ میں کمی کرتے ہوئے ارکان پارلیمنٹ کو مزید 3 ارب روپے دینے کا فیصلہ کیا ہے جو حکمران اتحاد کی ترجیحات کے بارے میں بولتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | پاکستان تیزی سے معاشی بدحالی کی طرف بڑھ رہا ہے: رپورٹ

یہ بھی پڑھیں | ایکشن کمیشن کا نگران حکومتوں سے سیاسی تقرریاں ختم کرنے کی درخواست

 حکومت نے پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس کے بجٹ میں 1.4 بلین روپے، پلاننگ ہاؤس کی تعمیر کے لیے مختص 800 ملین روپے اور جدید سپورٹ پروجیکٹ کے بجٹ سے مزید 800 ملین روپے کم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

قومی کفایت شعاری کمیٹی کی زیر غور تجویز

 یہ پیشرفت قومی کفایت شعاری کمیٹی کی زیر غور تجویز کے بعد سامنے آئی ہے جس میں اراکین پارلیمنٹ کی اسکیموں کے لیے اس طرح کی فنڈنگ روک دی گئی ہے۔ 

سفارشات وزیر اعظم کو بھجوائی جائیں گی

 ناصر کھوسہ کی زیر صدارت منگل کو مسلسل دوسرے روز اجلاس ہوا جس میں کمیٹی نے اپنی سفارشات کا مسودہ تیار کیا جو جلد وزیراعظم شہباز شریف کو بھجوایا جائے گا۔ 

کمیٹی کے ایک رکن نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ کمیٹی نے ایک سفارش کو حتمی شکل دی ہے جس میں وہ حکومت سے سینیٹ، قومی اسمبلی اور صوبائی اسمبلیوں کے ارکان کے ذریعے ترقیاتی منصوبوں پر عملدرآمد روکنے کے لیے کہے گی۔ 

ثاقب شیخ

ثاقب شیخ فاؤنڈیشن فار ڈیفنس آف ڈیموکریسیز کے ایک ریسرچ فیلو ہیں، جو واشنگٹن میں قائم، قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی پر توجہ مرکوز کرنے والا غیر جانبدارانہ تحقیقی ادارہ ہے۔