معاشرے کو بدعنوانی اور جنسی جرائم سے خود لڑنا ہو گا، وزیر اعظم عمران خان

بڑھتی ہوئی بدعنوانی اور جنسی جرائم کو مسلم دنیا کو درپیش دو اہم برائیاں قرار دیتے ہوئے، وزیراعظم عمران خان نے اتوار کے روز بًے اسلامی اسکالرز کے ساتھ اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ نوجوانوں کو ان کے عقیدے اور مذہبی اور اخلاقی اقدار پر سوشل میڈیا کے حملے سے کیسے بچایا جا سکتا ہے۔

وزیر اعظم نے قومی رحمت اللعالمین اتھارٹی کے زیر اہتمام مکالمے کے دوسرا حصہ ‘ریاست مدینہ: اسلام، معاشرہ اور اخلاقی احیاء’ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’معاشرے میں دو طرح کے جرائم ہوتے ہیں، ایک کرپشن اور دوسرا جنسی جرم۔ ہمارے معاشرے میں جنسی جرائم میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے، یعنی عصمت دری اور بچوں کے ساتھ بدسلوکی اور اس میں سے صرف ایک فیصد رپورٹ ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میرا ماننا ہے کہ دیگر 99 فیصد سے معاشرے کو اس سے لڑنا ہوگا۔ یہی حال کرپشن کا ہے۔ معاشرے کو کرپشن کو ناقابل قبول بنانا ہے۔ بدقسمتی سے، جب آپ کے پاس ایسی قیادت ہوتی ہے جو بدعنوان ہوتی ہے، تو وہ بدعنوانی کو قابل قبول بناتے ہیں۔

 بین الاقوامی اسکالرز کے نقطہ نظر کے دوران، عمران خان نے اشارہ کیا کہ وہ مستقبل میں بھی معروف اسکالرز کے ساتھ اسی طرح کے مکالمے کریں گے۔ یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ اس طرح کے فکر انگیز سیشن مہینے یا دو ماہ میں ایک بار منعقد کیے جائیں گے۔

 اسلامی اسکالرز اس بات پر متفق ہیں کہ نوجوانوں کو یہ سکھایا جانا چاہیے کہ جدید زندگی کے چیلنجوں سے کیسے نمٹا جائے۔

 وزیر اعظم نے مسلم نوجوانوں کو انٹرنیٹ پر دستیاب فحاشی اور فحش مواد کی لپیٹ میں آنے سے بچانے کی ضرورت پر زور دیا۔

یہ بھی پڑھیں | منی بجٹ کے لئے عمران خان کو آبپارہ سے سہولت نہیں ملے گی، روؤف کلاسرا

 اس موقع پر موجود علماء نے جدیدیت کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے مسلم ممالک کی جانب سے کچھ اجتماعی کوششوں کی تجویز دی۔ انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت اور سنت کے بارے میں بیداری پیدا کرکے نوجوان مسلمانوں کو جدید دور کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے درکار خصوصیات سے آراستہ کیا جا سکتا ہے۔

اسکالرز نے وزیراعظم کی جانب سے سوشل میڈیا کے ذریعے فحش مواد کی بے لگام دستیابی، بدعنوانی، خواتین اور بچوں کے خلاف جنسی جرائم کی بڑھتی ہوئی تعداد اور مسلم نوجوانوں اور عصری معاشرے کو درپیش دیگر چیلنجوں کے بارے میں اٹھائے گئے مختلف سوالات کے جوابات دیے۔ 

جارج واشنگٹن یونیورسٹی میں اسلامیات کے  پروفیسر ڈاکٹر سید حسین نصر نے کہا کہ مسلم نوجوانوں پر جدید رجحانات کے اثرات آج پہلے سے کہیں زیادہ محسوس کیے جا سکتے ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ آج دنیا نوجوانوں کے لیے ایک زیادہ خطرناک جگہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مسلم نوجوانوں کو ایسی تعلیمات کے ذریعے رہنمائی کی جانی چاہیے جو مستند ہوں اور ان چیلنجز سے متعلق ہوں جو انھیں درپیش ہیں۔ 

ڈاکٹر نصر نے ان مغربی عناصر کی مذمت کی جو اسلام کے بارے میں منفی لہجے میں بات کرتے ہیں جو کہ مذہب پر حملہ کرنے کے مترادف ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں