مسنگ پرسن حسیب حمزہ کی واپسی، اسلام آباد ہائی کورٹ پہنچ گئے

حسیب حمزہ کی گمشدگی

اسلام آباد ہائی کورٹ نے آج بدھ کے روز مسنگ پرسن حسیب حمزہ کی گمشدگی کی جامع تحقیقات کا حکم دیا جسے 22 اگست کو ان کی رہائش گاہ سے زبردستی اٹھایا گیا تھا اور پولیس کی جانب سے حمزہ کو عدالت میں پیش کرنے کے بعد ان کی بازیابی کی درخواست نمٹا دی۔ 

لاپتہ شخص حمزہ کو پولیس نے بازیاب کرایا اور آئی ایچ سی کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کی سربراہی میں ان کے کیس کی سماعت کے لیے عدالت میں پیش کیا۔

ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد بیرسٹر جہانگیر جدون بھی عدالت میں پیش ہوئے۔ 

حمزہ کہاں تھے

 کارروائی شروع ہوتے ہی عدالت نے استفسار کیا کہ حمزہ کہاں تھے، جس پر انہوں نے جواب دیا کہ لیتے وقت ان کی آنکھوں پر پٹی بندھی ہوئی تھی اور وہ اس بات سے لاعلم ہیں کہ وہ کہاں تھے۔ 

 چیف جسٹس نے پولیس اہلکاروں سے پوچھا کہ انسپکٹر جنرل نے کیا انکوائری کی؟ پولیس کے مطابق ابتدائی کیس کے اندراج میں تاخیر کے ساتھ ساتھ لاپتہ ہونے کی تحقیقات کر رہے تھے۔

 جسٹس من اللہ نے پھر استفسار کیا کہ پولیس کے پاس دیگر لاپتہ افراد کے کیسز ہیں۔ اس پر انہوں نے عدالت کو بتایا کہ کچھ لوگ بازیاب ہوئے ہیں جبکہ دیگر کی بازیابی جاری ہے۔ 

کورٹ کے ریمارکس

 اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ریاست کی آئینی ذمہ داری ہے کہ وہ شہریوں کے تحفظ کو یقینی بنائے لیکن یہ کہ کوئی بھی اپنی ذمہ داری پوری نہیں کر رہا اور احتساب بھی یقینی نہیں بنایا جا رہا۔

یہ بھی پڑھیں | سیلاب متاثرہ علاقوں میں روڈوں اور بجلی کی بحالی کا کام جاری

یہ بھی پڑھیں | کراچی میں ڈینگی وائرس سے ہسپتال بھر گئے

انہوں نے کہا کہ 23 ​​اگست کو حمزہ کے والد سٹیشن ہاؤسنگ آفیسر (ایس ایچ او) کے پاس گئے لیکن عدالت کے نوٹس لینے کے بعد ہی پہلی مخبر رپورٹ (ایف آئی آر) درج کی گئی۔ 

 انہوں نے سوال کیا کہ کیا عدالت نے کبھی آپ کو کسی ایسے شخص کے خلاف کارروائی کرنے سے روکا ہے جس نے جرم کیا ہے؟۔

پولیس کو کام کرنا چاہیے

 انہوں نے مزید کہا کہ پولیس کو قانون کے مطابق کام کرنا چاہیے۔ 

انہوں نے روشنی ڈالی کہ آج بھی لوگ لاپتہ ہیں اور سوال کیا کہ نظام کیسے چلے گا۔ ایڈووکیٹ جنرل نے جواب دیا کہ نظام میں کچھ خرابیاں ہیں اور اس کی مکمل تحقیقات کی جائیں گی۔ 

 ایڈووکیٹ جنرل نے مزید کہا کہ آئی جی کو ہدایت کی گئی ہے کہ اگر کوئی پولیس کے پاس گیا تو فوری کارروائی کریں۔ 

عدالت آئین اور قانون کو برقرار رکھنے

چیف جسٹس من اللہ نے کہا کہ سسٹم میں کوئی خرابی نہیں ہے، کوئی احتساب یا ذمہ داری نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ عدالت آئین اور قانون کو برقرار رکھنے کے علاوہ کچھ نہیں کر سکتی۔ 

 جسٹس من اللہ نے سوال کیا کہ اس معاملے کی تحقیقات کون کرے گا اور حمزہ کو کس نے اغوا کیا؟ اس پر، اے جی نے کہا کہ متاثرہ شخص کسی ایسے شخص کی شناخت کرسکتا ہے جو اس کے اغوا میں ملوث تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔