مزید 5 سے 6 ممالک اسرائیل سے تعلقات قائم کرنے کو تیار ہیں، ٹرمپ

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے منگل کو کہا کہ “پانچ یا چھ” دوسرے عرب ممالک کو بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے لئے تیار کیا گیا ہے کیونکہ متحدہ عرب امارات اور بحرین نے آج تل ابیب کے ساتھ تاریخی امن معاہدہ کیا ہے۔

 ہم تقریبا پانچ ممالک کے ساتھ مزید اسرائیل سے تعلقات قائم کروانے کے رستے پہ گامزن ہیں۔  ٹرمپ نے کہا کہ ہمارے پاس کم سے کم پانچ یا چھ ممالک بہت تیزی سے ساتھ آئیں گے ہم ان سے پہلے ہی بات کر رہے ہیں۔ ٹرمپ نے اضافی ممالک کا نام نہیں لیا  لیکن متحدہ عرب امارات کے وزیر خارجہ عبداللہ بن زاید النہیان کے ساتھ علیحدہ دوطرفہ بات چیت کے دوران اشارہ کیا کہ سعودی عرب خاص طور پر کچھ کہے بغیر بورڈ میں شامل ہوسکتا ہے۔

سعودی عرب کے ساتھ ہماری بڑی بات چیت ہوئی ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ ان کا دماغ بہت کھلا ہے۔ یہ بات صدر ٹرمپ نے کی جبکہ ان کی جانب سے دستخط کی تقریب سے قبل بحرین کے وزیر خارجہ عبد اللطیف الزانی سے بھی ملاقات کی۔

ٹرمپ نے دستخط کرنے کی تقریب کے آغاز میں کہا کہ مشرق وسطی کے لئے، ابراہیم معاہدوں کے نام سے ہونے والے معاہدوں کو دہائیوں پرانی قدیم صورتحال میں ایک علیحدہ تبدیلی کی علامت قرار دیا گیا ہے جہاں عرب ممالک نے فلسطینیوں کے ساتھ اسرائیل کے سلوک پر اسرائیل کے خلاف اتحاد برقرار رکھنے کی کوشش کی ہے۔ دہائیوں کی تقسیم اور تنازعہ کے بعد ہم ایک نئے مشرق وسطی کے طلوع آفتاب کے لئے کوشاں ہیں ۔ 

فلسطینی رہنماؤں نے مقبوضہ علاقوں اور ریاستہائے متحدہ ، اسرائیل ، بحرین اور متحدہ عرب امارات کے بیرونی سفارت خانوں میں مظاہرے کئے ہیں اور کہا ہے کہ وہ “شرمناک معاہدوں” پر سراپا احتجاج ہیں۔ بہرحال ٹرمپ نے اعتماد کا اظہار کیا کہ فلسطینی آخر کار امریکہ کے زیر اثر معاہدے پر دستخط کردیں گے – جس کی انہیں امید ہے کہ نومبر میں ان کے انتخاب کے امکانات بڑھ جائیں گے۔ 

ٹرمپ نے یہ بھی کہا کہ فلسطینی بالکل ممبر ہوں گے۔ میں یہ کسی بہادری کی بنیاد پہ نہیں کہتا بلکہ میں صرف یہ کہتا ہوں کہ فلسطینی صحیح وقت پر رکن ہوں گے۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *