مری کے ہوٹل مالکان کی حکومت سے مری بائیکاٹ مہم روکنے کی اپیل

مری ہوٹل ایسوسی ایشن کے چیئرمین راجہ عرفان نے اس الزام کو مسترد کر دیا ہے کہ مری میں سیاحوں کی موت اس لیے ہوئی کیونکہ ہوٹل مالکان کمروں کے لیے حد سے زیادہ کرایہ وصول کر رہے تھے۔ 

انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ لوگ اپنی گاڑیوں کے ہیٹر آن کر رہے تھے اور شیشے بند کر کے لطف اندوز ہو رہے تھے جس کے نتیجے میں ان کی اموات ہو گئیں۔ 

ہوٹل مالکان نے حکومت سے درخواست کی کہ وہ مری بائیکاٹ مہم روکیں کیونکہ ان کے کاروبار ٹھپ ہو گئے ہیں۔

 یاد رہے کہ مری میں جمعے کی رات برفانی طوفان کے دوران گاڑیوں میں پھنس جانے سے کم از کم 22 افراد سردی اور دم گھٹنے سے ہلاک ہوگئے تھے۔ مری سے واپس آنے والے بہت سے سیاحوں کا کہنا تھا کہ ہوٹل مالکان نے رہائش کے معاوضے وصول کیے اور لوگوں کو اپنی گاڑیوں میں رات گزارنے پر مجبور کیا۔ 

 تاہم ہوٹل مالکان نے کہا کہ ایسے تمام دعوے بے بنیاد ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں | خیبر پختونخواہ میں مری کی طرح برف باری؛ سانحہ کیوں نہیں ہوا؟

ہم نے تمام رجسٹرڈ ہوٹلوں سے کہا تھا کہ وہ مفت کھانا اور رہائش فراہم کریں اور ہم نے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو سہولت فراہم کرنے کی کوشش کی۔

 انہوں نے ان دعوؤں کی تردید کی کہ مقامی لوگ لوگوں سے رقم کا مطالبہ کر رہے تھے، انہوں نے مزید کہا کہ فوج کو بلانے سے پہلے ہی مقامی لوگ مدد کے لیے آئے تھے۔

 راجہ عرفان کے مطابق 35% سے 40% ہوٹل مالکان کا تعلق دوسرے شہروں جیسے لاہور، فیصل آباد اور کراچی سے ہے۔  جب ان سے پوچھا گیا کہ لوگوں سے ایک انڈے کے لیے 200 روپے وصول کیے جاتے ہیں، تو انھوں نے کہا کہ ممکن ہے کہ کچھ ڈھابوں نے لوگوں سے اوور چارج کیا ہو۔ 

یہاں پٹھان بچے ہیں جو بالٹیوں میں انڈے بیچتے ہیں۔ ہم چیک نہیں کر سکتے کہ وہ کیا کر رہے ہیں۔ انہوں نے ان دعوؤں کو مسترد کیا کہ ہوٹلوں کے قریب لوگ مرے اور مالکان ان کی مدد کو نہیں آئے۔ 

تمام اموات ویران علاقوں میں ہوئیں۔ یہ علاقے گرمیوں میں بھی سرد ہوتے ہیں۔ آس پاس کوئی ہوٹل نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں