مری میں دو سالوں سے روڈ ریپئیر نہیں کئے گئے تھے

سانحہ مری – جس میں جمعہ کی رات 23 سیاح اپنی گاڑیوں میں پھنسے ہوئے ہلاک ہو گئے تھے – کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ ہل سٹیشن اور اس کے اطراف کی سڑکوں کی گزشتہ دو سالوں سے مرمت نہیں کی گئی تھی جس کی وجہ سے دراڑوں میں برف جمع ہو گئی تھی۔ 

 اتوار کو پنجاب حکومت کو جمع کرائی گئی رپورٹ میں مزید انکشاف کیا گیا ہے کہ مری میں ایک پرائیویٹ کیفے کے باہر پھسلن والی جگہ پہاڑی اسٹیشن سے مرکزی اخراج کا باعث بنی۔ تاہم برف ہٹانے کے لیے کوئی سرکاری مشینری موجود نہیں تھی جس کی وجہ سے سیاحوں کو فرار ہونے میں مدد مل سکتی تھی۔ 

یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ مری کے مختلف علاقوں میں بجلی کی بندش کے باعث سیاحوں نے اپنے ہوٹل چھوڑ کر گاڑیوں میں رہنے کو ترجیح دی۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان نے افغان طالبان کو “ٹی ٹی پی” کو ایک ٹیسٹ کیس کے طورپر لینے کا کہہ دیا

 ہفتہ کی شب راولپنڈی کے ڈپٹی کمشنر اور سینٹرل پولیس آفیسر کی مداخلت کے باعث مری میں گاڑیوں کی آمدورفت پر پابندی لگا دی گئی۔

 مری کی سڑکوں پر ٹریفک جام کے باعث برف ہٹانے والی مشینری کے ڈرائیور بروقت جائے وقوعہ پر نہ پہنچ سکے۔ 

تاہم ٹریفک کی روانی کو یقینی بنانے کے لیے اسسٹنٹ کمشنر اور ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس وہاں موجود تھے۔

 رپورٹ کے مطابق مری میں کوئی پارکنگ پلازہ نہیں ہے جہاں گاڑیاں رکھی جا سکیں۔ مقامی حکام نے برفانی طوفان کے تھمنے کے بعد صبح 8 بجے کے بعد ریسکیو آپریشن شروع کیا۔

 وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے مزید تحقیقات کے لیے ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سربراہی میں کمیٹی تشکیل دے دی۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔