لوڈیشیڈنگ: کراچی میں احتجاج کے دوران تشدد سے خاتون جاں بحق

سخت گرمی میں بجلی کی طویل بندش کے خلاف کراچی کے مشتعل عوام منگل کو سڑکوں پر نکل آئے۔ 

 ملک کے تجارتی مرکز کے مختلف علاقوں میں مظاہرین نے پولیس پر پتھراؤ کیا اور پولیس نے جوابی آنسو گیس اور لاٹھی چارج کیا۔ دونوں فریقوں کے درمیان مذاکرات ناکام ہونے کے بعد انہوں نے متعدد مظاہرین کو گرفتار بھی کیا۔ 

 منگل کو کراچی کے علاقے ماڑی پور میں مبینہ طور پر ایک 60 سالہ خاتون شہر میں گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ کے خلاف احتجاج کے دوران پولیس کے تشدد کے نتیجے میں ہلاک ہوگئی۔ 

 خاتون کی شناخت عبدالکریم کی بیوی میران بی بی کے نام سے ہوئی ہے۔ وہ ہنگورآباد کی رہنے والی تھی۔ 

 تاہم پولیس نے اس بات کی تردید کی ہے کہ خاتون کی موت مظاہرین کے خلاف پولیس کی بربریت کے نتیجے میں ہوئی۔ ایس ایس پی سٹی نے بتایا کہ متوفی کی عمر 70 سال تھی اور اس کی موت قدرتی موت ہوئی۔

یہ بھی پڑھیں | کرونا وائرس: ماسک پہننے کو ایک دفعہ پھر لازمی قرار دے دیا گیا  

یہ بھی پڑھیں | نارتھ وزیرستان میں سات دہشتگرد ہلاک، آئی ایس پی آر  

 انہوں نے مزید کہا کہ متوفی کے پوسٹ مارٹم کے لیے بات چیت جاری ہے۔ 

 افسر نے کہا کہ کے الیکٹرک کو بزرگ خاتون کی موت کا مقدمہ درج کیا جانا چاہئے اور مزید کہا کہ مظاہرین سڑکوں پر نکلے ہوئے تھے کیونکہ ان کے پاس گزشتہ 12 گھنٹے سے بجلی نہیں تھی۔ 

انہوں نے کہا کہ پولیس کے پاس واقعے کی فوٹیج موجود ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوگوں کو “بے بنیاد افواہوں” پر دھیان نہیں دینا چاہیے۔ 

شہر کے گنجان آباد ایف سی ایریا کے مکین بھی احتجاج کے لیے سڑکوں پر نکل آئے۔ 

 انہوں نے بجلی کی طویل اور غیر اعلانیہ بندش کے خلاف کے ای کے دفتر کے باہر احتجاج کیا۔ اگرچہ دفتر بند تھا اور عملہ غیر حاضر تھا تاہم مظاہرین نے پتھراؤ اور نعرے لگا کر اپنا غصہ نکالا۔ 

 قانون نافذ کرنے والے ادارے موقع پر پہنچ گئے اور لاٹھی چارج کا استعمال کرتے ہوئے مظاہرین کو منتشر کردیا۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔