قومی ٹیم میں واپسی صرف عزت کے ساتھ چاہتا ہوں، محمد عامر

 پاکستان پاکستان

قومی کرکٹ ٹیم کے فاسٹ بولر محمد عامر

نے کہا ہے کہ جب تک ٹیم انتظامیہ ان سے رابطہ نہیں کرتی وہ ٹیم میں واپس نہیں آئیں گے۔ 

 ٹی 10 لیگ کے دوران محمد عامر نے ورچوئل پریس کانفرنس کی جس میں انہوں نے شائقین کرکٹ کے مختلف سوالات کے جوابات دیے۔

 پریس کانفرنس کے دوران ایک کرکٹ مداح نے محمد عامر سے قومی ٹیم میں واپسی کے بارے میں سوال کیا۔ محمد عامر نے جواب دیا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے سابق چیئرمین اور انتظامیہ مجھ سے رابطے میں تھے لیکن نئے چیئرمین نے ابھی تک مجھ سے کوئی رابطہ نہیں کیا۔

 محمد عامر نے کہا کہ جب تک نئی ٹیم مینجمنٹ مجھ سے رابطہ نہیں کرتی میں ریٹائرمنٹ کا فیصلہ واپس لینے پر غور نہیں کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ میں وقار کے ساتھ ٹیم میں واپسی چاہتا ہوں، اس لیے اگر انتظامیہ مجھ سے رابطہ کرتی ہے تو میں ریٹائرمنٹ ختم کرنے پر غور کروں گا۔ 

یہ بھی پڑھیں | بابر اعظم نے شادی اور سیلری سمیت دیگر اہم سوالات کے جوابات دے دئیے   

محمد عامر نے مزید کہا کہ میں ریٹائرمنٹ کا فیصلہ واپس نہیں لینا چاہتا اور ٹیم انتظامیہ نے کہا کہ ہم آپ کو کھانا نہیں کھلانا چاہتے، اس لیے عزت کے ساتھ ٹیم میں واپس آؤں گا، ورنہ نہیں۔

 یاد رہے کہ محمد عامر نے گزشتہ سال انتظامیہ سے مایوسی کے باعث ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا تھا۔ فاسٹ بولر محمد عامر نے پاکستان کرکٹ ٹیم کی انتظامیہ پر تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہیں ذہنی اذیت دی جارہی ہے۔

 دوسری جانب پی سی بی نے عامر کی ریٹائرمنٹ کے فیصلے کو ذاتی فیصلہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ آئندہ کسی بھی انٹرنیشنل میچ کے لیے محمد عامر کے نام پر غور نہیں کیا جائے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں