قومی سلامتی پالیسی پر پارلیمنٹ میں بحث کی جائے گی، حکومت کی یقینی دہانی

حکومت نے منگل کو سینیٹ میں یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ قومی سلامتی پالیسی (این ایس پی) کو بحث کے لئے پہلے پارلیمنٹ میں پیش کرے گی۔

 قائد ایوان ڈاکٹر شہزاد وسیم کی جانب سے یہ یقین دہانی اپوزیشن کے احتجاج کے فوراً بعد ہوئی کہ اس پالیسی پر اپوزیشن کو اعتماد میں نہیں لیا گیا ہے۔

 سابق چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے عوامی اہمیت کے ایک نکتے پر ایوان میں معاملہ اٹھایا۔ سینیٹر ربانی نے نشاندہی کی کہ حکومت کی جانب سے حال ہی میں شروع کی گئی این ایس پی پر نہ تو پارلیمنٹ اور نہ ہی صوبوں کو اعتماد میں لیا گیا ہے اور اس بات پر زور دیا کہ وزیر اعظم عمران خان کو پالیسی کے اہم نکات قومی اسمبلی یا سینیٹ میں پبلک کرنے چاہیے تھے۔ 

 انہوں نے کہا کہ یہ پالیسی اس وقت تک موثر نہیں ہوگی جب تک پارلیمنٹ اس کا جائزہ نہیں لے گی اور کہا کہ یہ اس وقت تک غیر موثر رہے گی جب تک اس پر پارلیمنٹ، صوبوں اور سول سوسائٹی کا کوئی ان پٹ نہیں ہوگا۔ 

انہوں نے کہا کہ ہم ریاست کو یہ حق نہیں دیں گے کہ غیر منتخب لوگ ایگزیکٹو کے ساتھ بیٹھ کر مستقبل کی پالیسیاں یا مستقبل کے لائحہ عمل بنائیں اور پارلیمنٹ کو اس پر اعتماد میں نہ لیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں | تین سالوں میں ریاست مدینہ کے لئے کیا کچھ کیا؟ وزیر اعظم عمران خان کا کالم

 قائد ایوان سینیٹر وسیم نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کی حکومت پہلی حکومت ہے جس نے قومی سلامتی سے متعلق پالیسی دی اور وضاحت کی کہ جب پالیسی کا مسودہ تیار کیا جا رہا تھا تو تمام اسٹیک ہولڈرز کو مدعو کیا گیا تھا۔ 

 مسودے کے مرحلے پر، انہوں نے کہا کہ پالیسی کو پارلیمانی کمیٹی برائے قومی سلامتی کے سامنے بحث کے لیے پیش کیا گیا تھا لیکن اپوزیشن نے اس اجلاس کا بائیکاٹ کیا اور حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

 انہوں نے نوٹ کیا کہ پالیسی کے ایک مخصوص حصے کی درجہ بندی کی گئی تھی جب کہ دوسرے کو عوامی کر دیا گیا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ ہم پالیسی کو قائمہ کمیٹی برائے دفاع کے سامنے پیش کرنے جا رہے ہیں جبکہ حکومت اسے کسی بھی پارلیمانی فورم پر پیش کرنے کے لیے تیار ہے۔ اس سے قبل، وقفہ سوالات کے دوران، ایوان میں ایک بار پھر پاکستان کی مسلح افواج کے ریٹائرڈ اہلکاروں کی نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) میں کلیدی عہدوں پر بھرتی پر گرما گرم بحث دیکھنے میں آئی۔

جماعت اسلامی کے سینیٹ رہنما نے کہا کہ نوجوانوں کو نوکریاں نہیں مل رہی ہیں جبکہ نادرا میں ریٹائرڈ فوجی بھرتی کئے جا رہے ہیں جبکہ نادرا کی جانب سے اس سوال کا کوئی خاص جواب نہیں دیا گیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں