مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    فیسبک سمیت دیگر سوشل میڈیا ویب سائٹس ایف آئی اے کے ساتھ تعاون نہیں کر رہیں

    پیر کو قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع کو بتایا گیا کہ سوشل میڈیا کمپنیاںبشمول فیسبک پاکستان میں سائبر کرائم کا مقابلہ کرنے کے لئے کافی تعاون نہیں کررہی ہیں۔ 

    ایم این اے امجد خان کی سربراہی میں ہونے والی اس میٹنگ میں سرکاری اداروں کے ساتھ رابطے میں سائبر کرائم کو روکنے کے لئے فیس بک ، ٹویٹر اور ٹِک ٹوک جیسے سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ایف آئی اے سے متعلق تعاون پر بات چیت کی گئی۔

     نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی (نیکٹا) کے عہدیداروں نے سوشل میڈیا کمپنیوں کے تعاون پر رضامندی کے فقدان پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ فیس بک ہماری درخواستوں کا جواب دینے کی بھی زحمت گوارا نہیں کرتا ہے۔

     سکریٹری برائے داخلہ کمیٹی کو بتایا گیا کہ گذشتہ سال سے 94،000 سائبر کرائم کی شکایات درج کی گئی ہیں۔ ہم ان تمام شکایت پر غور کررہے ہیں اور کسی کو بھی نہیں بخشا جائے گا۔ 

    سیکرٹری نے بتایا کہ ایف آئی اے کے سائبر کرائم ونگ کو روزانہ کی بنیاد پر حکومت مخالف ، مذہبی ، جعلی اکاؤنٹس اور چائلڈ پورنوگرافی پوسٹوں سے متعلق 260 شکایات موصول ہوتی ہیں۔

     اس موقع پر کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے پی ٹی اے حکام نے کمیٹی کو بتایا کہ فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کی ہدایت کے تحت ملک میں تقریبا تمام فحش ویب سائٹوں تک رسائی روک دی گئی ہے۔ 

    عہدیداروں نے کمیٹی کو یقین دلایا کہ مؤثر اقدامات کے بعد توہین رسالت کے مقدمات سے متعلق شکایات میں بھی کمی آئی ہے۔

    یہ بھی پڑھیں | روپیہ دو سال کی بلند ترین قیمت پر آ گیا 

     ایف آئی اے کے ایک عہدیدار نے کمیٹی کو بتایا کہ کوویڈ19 کے سبب ایسے کیسز سے نمٹنے میں عہدیداروں کی تربیت میں بھی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے کیونکہ تربیت صرف عملی طور پر کی جاسکتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس کا اطمینان بخش نتیجہ برآمد نہیں ہوا۔

     اس موقع پر ، ایم این اے آفتاب شعبان میرانی نے کہا کہ ملک کی سائبر سکیورٹی کو لاحق خطرات سے نمٹنے کے لئے ٹھوس اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اہم اکاؤنٹس کی ہیکنگ کا خطرہ بھی بڑھ گیا ہے۔

     ممبر قومی اسمبلی رمیش کمار نے کہا کہ این اے سی ٹی اے اپنی شرائط (ٹی او آرز) سے انحراف کر رہا ہے۔ رمیش کمار نے کہا کہ نیکٹا کی کارکردگی پر بہت سارے سوالیہ نشان ہیں۔ تھر اور بدین میں 500 سے زیادہ غیر رجسٹرڈ دینی مدارس قائم کیے گئے ہیں اور این اے سی ٹی اے نے اس بارے میں کچھ نہیں کیا۔  انہوں نے کہا کہ ہمسایہ ملک افغانستان سے امریکی انخلا کی روشنی میں ، قومی سلامتی کے بارے میں سوال بہت زیادہ شدت اختیار کررہا ہے اور اس کو یقینی بنانے کے لئے مزید کچھ کرنا چاہئے

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x