فروری کے درمیان میں کوویڈ19 کی پانچویں لہر آ سکتی ہے، وزارت صحت

پاکستان میں وزارت صحت کے حکام نے خبردار کیا ہے کہ فروری 2022 کے درمیان میں کوویڈ19 کی پانچویں لہر آ سکتی ہے جس میں تقریباً روزانہ 3 سے 4 ہزار کیسز کی تشخیص ہو سکتی ہے۔ اس لہر کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ کوویڈ19 کی اومیکرون قسم پاکستان کے بڑے شہروں میں شروع ہو گئی ہے۔ خاص طور پر کراچی، لاہور اور اسلام آباد میں اب تک 75 افراد اومیکرون سے متاثر ہوئے ہیں۔

 کورونا وائرس کے اومیکرون ویرینٹ کی منتقلی کراچی، لاہور اور اسلام آباد میں شروع ہو گئی ہے اور ہمیں خدشہ ہے کہ آنے والے دو ہفتوں میں پورے ملک میں کوویڈ19 کے کیسز بڑھ جائیں گے۔

 نیشنل ہیلتھ سروسز، ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن کے ایک اہلکار نے نجی نیوز کو بتایا کہ پاکستان فروری 2022 کے وسط میں کوویڈ19 کی پانچویں لہر کا تجربہ کر سکتا ہے جس کے ساتھ روزانہ کیسز کی تعداد 3,000 سے 4,000 تک پہنچ جائے گی۔ 

یہ بھی پڑھیں | کراچی میں سردی کا تیرہ سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا

 نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ، اسلام آباد نے بھی تصدیق کی ہے کہ پاکستان میں اب تک اومیکرون ویریئنٹ کے 75 کیسز کی تصدیق ہوئی ہے، جن میں 33 کراچی کے ہیں جہاں پہلا کیس 13 دسمبر 2021 کو رپورٹ ہوا تھا جبکہ بقیہ کیسز اسلام آباد اور سمیت دیگر شہروں سے رپورٹ ہوئے ہیں۔

 اہلکار نے مزید دعویٰ کیا کہ اومیکرون کے زیادہ تر مختلف کیسز ‘غیر علامتی’ تھے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ بڑے شہروں میں خاموشی سے پھیل رہا ہے جہاں صرف چند لیبز میں مشتبہ کیسز کو لینے اور پھر نیشنل انسٹی ٹیوٹ کو رپورٹ کرنے کی صلاحیت ہے۔ 

 پورے پاکستان میں سات یا آٹھ لیبارٹریز ہیں جن میں وائرس میں ہونے والے تغیرات کا پتہ لگانے کی صلاحیت ہے جو اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ یہ اومیکرون ویرینٹ ہے۔ ایک بار جب ان لیبز میں مشتبہ کیسز آتے ہیں، تو وہ تصدیق کے لیے پورے جینوم کی ترتیب کے لیے اسے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ، اسلام آباد یا کراچی بھیج دیتے ہیں۔

 شاید، اسی لیے ہم تشویش کے اس قسم کے کیسز کی ایک بڑی تعداد کو نہیں دیکھ رہے ہیں لیکن یہ پاکستان میں تیزی سے ڈیلٹا ویرینٹ کی جگہ لے رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں